البرٹ آئنسٹائن

تحریر :آفتاب سکندر

, البرٹ آئنسٹائن

کسی بھی فہیم کے فہم میں کسی جامعہ العلوم ہستی کے جنم دن کی جانکاری ہونا اُس کے نہ صرف اُس ہستی کے متعلق عقیدت و احترام کے رشتے کا منہ بولتا ثبوت ہے بلکہ اُس ذہین و فتین حضرت کے کارہائے نمایاں سے روشنائی کی بھی زینت ہے. جہاں مجھ جیسے بے ہنر اور ناچیز کی وابستگی کا تعلق ہے تو میں طبعیات کا ادنیٰ ترین طالب علم ہوں. جہاں طبعیات میں تشنگانِ علم اور بہت سی اعلی اور قد آور شخصیات کے نظریات کے تاثر کو قبول کرتے ہوئے سراہتے ہیں اور ان کو عظیم و علیم گردانتے ہیں وہیں پر البرٹ آئن شٹائین نامی ہستی کا بھی طوطی بولتا ہے. اس عظیم و فہیم، فصیح و بلیغ ہستی کا جنم آج ہی کے دن ہوا. طبعیات میں انہوں نے بہت سے نئے تصورات و تفکرات دیے. جو ان کی لیاقت و قابلیت، اہلیت و صلاحیت اور فہم و فراست کی منہ بولتی تصویر ہیں. قدیم تصوراتِ طبعیات میں یہ یقین کیا جاتا تھا کہ ایتھر نامی مرکب کی مرہون منت یہ خلاء کی سیج سجی ہوئی ہے مگر یہ آئن شٹائین ہی وہ شخصیت تھے جنہوں نے اس غلط تصور کا رد کرتے ہوئے بتلایا کہ بھیا خلاء نامی شے کسی بھی شے کی غیر موجودگی کا نام ہے جس میں یہ کائنات پھیل رہی ہے. پھر ایک بہت بڑی رہنمائی موصوف نے اس مساوت سے کی کہ مادہ توانائی کی ہی شکل ہے.


E=mc2
ان کے دیے گئے اسی تصور کی بنا پر آج ہم اس قابل ہوئے ہیں کہ جوہری ہتھیاروں اور جوہری توانائی کے میدان میں جو مقام حاصل کرچکے ہیں وہ کسی سے بھی ڈھکا چھپا نہیں ہے.
کائنات سپیس ٹائم فیبرک سے بنی ہے اور وقت کچھ بھی نہیں. نظریہ اضافیت پیش کیا جس میں یہ دعویٰ بھی کیا کہ کوئی بھی شے جب روشنی کی رفتار سے سفر کرنا شروع کرتی ہے تو وقت اُس کے لئے تھم جاتا ہے. اور یہ کہ جاذبیت، کششِ ثقل شعاؤں کے روپ میں وجود پذیر ہے جس کو حال ہی میں ثابت بھی کیا گیا ہے. ان کے پیش کردہ تمام نظریات و تصورات طبعیات میں بہت ہی اہمیت کے حامل تھے اور طبعیات کے لئے وسعتوں کے دروازے کھول کر طبعیات کو بحرِ علوم کا سیلِ رواں بنا دینے والے تھے اور ان ہی کی بدولت طبعیات کا قعر و قلزم اوج کمال پہ رواں دواں رہا مگر یہ بھی حقیقت ہے کہ نوبل انعام اُن کو ان تصورات کی بجائے فوٹو الیکٹرک ایفیکٹ کے نظریے پر دیا گیا جس میں وہ بیان کرتے ہیں کہ روشنی جب بھی کسی میٹل پر گرتی ہے تو اس سے الیکٹران کا اخراج ہوتا ہے. یہ نظریہ بھی اُن تمام نظریات کی طرح طبعیات کے لئے نئی جہتیں کھولنے والا تھا.


آئنسٹائین نے بہت سے سوالات اُٹھا ئے اور ان پر مفصل گفت و شنید بھی کی. جن میں یہ ایک بنیادی سوال تھا کہ اگر ہم کسی مادہ کو دیکھ نہیں پاتے تو کیا پھر بھی وہ مادہ وجود رکھتا ہے یا نہیں؟
یا یہ کہ ہم مادہ کی کمیت اور رفتار کو ایک ہی وقت میں معلوم کرسکتے ہیں؟
آئن سٹائین کا اُٹھایا گیا یہ سوال بہت ہی عمدہ اور بہترین تھا دلچسپ و حیرت انگیز ہونے کے ساتھ ساتھ کہ اگر کوئی مادی جسم خلاء میں سفر کر رہا ہو اور اُس کے گرد کوئی ریفرنس پوائنٹ نہ ہو تو کیا وہ محوِ حرکت ہوگا بھی کہ نہیں؟
آئن سٹائین کے نظریات و تصورات کی ہی بدولت کوانٹم مکینیات معرضِ وجود میں آئی اور یوں تشنگانِ علوم و فنون کے لئے طبعیات کی ایک نئی اور پرکشش کائنات معرضِ وجود میں آئی. طبعیات کو ایسے درخشاں اختر کی ضرورت ہر دور میں رہے گی.
********

اپنی تحریر اس میل پہ ارسال کریں
lafznamaweb@gmail.com

شیئر کریں

کمنٹ کریں