انار کے 6 حیران کن فائدے

انار Pomegranates فائدے علاج دیسی نسخہ

یہ انار ایک رسیلا پھل ہے ۔ یہ آپ کو صحت مند رکھنے میں مددکرتا ہے اس میں اینٹی آکسیڈینٹس ، فائبرکی مقدار بہت زیادہ ہے ۔ یہ جسم کو فٹ اور صحت مند رکھتا ہے

انار مزیدار پھل ہے اسے بچے بڑے سبھی شوق سے کھاتے ہیں ۔ اس کے خوبصورت چمکدار سرخ بیج رس سے بھرے ہوتے ہیں ۔ انار کا رس وزن گھٹانے میں بھی مدد گار ہے ۔ یہ پیٹ کے آس پا سکی چربی کو تیزی سے تحلیل کرتا ہے ۔ ایران اور شمالی ہندوستان کے باشندے ہزاروں سالوں سے انار کا استعمال روزمرہ کی خوراک میں کر رہے ہیں جب کہ امریکہ میں اس کی مقبولیت نسبتا نئی ہے۔انار کا تذکرہ بائبل میں بھی موجود ہے

نظامِ انہضام

“انار میں فائبر کی مقدار زیادہ ہے ۔ انار کے ایک آدھے کپ کے بیج (جسے انار آرلز بھی کہا جاتا ہے) میں گرام فائبر ہوتا ہے ، اس کا مطلب ہے کہ آپ اپنے صبح کے دہی کے پیالے میں انار ڈال کر اپنی خوراک میں فائبر کی مقدار بڑھا سکتے ہیں۔

لیکن شاید مناسب فائبر حاصل کرنے کا سب سے فوری فائدہ صحت مند ہاضمہ ہے۔ امریکی نیشنل لائبریری آف میڈیسن کے مطابق ، انار کا روزانہ استعمال کرنے سے ہاضمہ بہتر ہوجاتا ہے اور قبض کو دور کرنے میں مدد ملتی ہے۔ ایک بات نوٹ کرنے کی یہ ہے کہ آپ کو صرف انار کے بیج کھانے سے ہی فائبر ملے گا ، انار کا جوس پینے سے نہیں۔

قلبی صحت

اپنی خوراک میں فائبر حاصل کرنا دل کی صحت میں بھی بہتری لاتا ہے ہے۔ انار کے بیجوں میں پائے جانے والے فائبر سمیت بعض قسم کے فائبر آپ کے ایل ڈی ایل (خراب) کولیسٹرول کو کم کرنے میں مدد کرتے ہیں ، جس سے آپ کو دل کی بیماری اور فالج کا خطرہ کم ہوجاتا ہے۔ ماہر خوراک کے ایل پاٹھک نے یہ بھی نوٹ کیا ہے کہ انار میں پوٹاشیم کی مقدار زیادہ ہے ، جبکہ امریکن ہارٹ ایسوسی ایشن کا کہنا ہے کہ جب ہائی بلڈ پریشر کی روک تھام کرنے کی بات آتی ہے تو انار کے استعمال سے خطرہ کم ہوتا ہے۔

شوگر کا علاج

ٹائپ 2 ذیابیطس والے لوگوں کے لئے انار کا جوس فائدہ مند ثابت ہوسکتا ہے۔ چالیس بالغ ٹائپ 2 ذیابیطس کے مریضوں پر کی گئی ایک مختصر تحقیق سے یہ معلوم ہوا ہے کہ روزانہ 50 گرام غذائی انار کا جوس پینا سوزش مرکبات کی نچلی سطح ، اور ایچ ڈی ایل (اچھے) کولیسٹرول کی اعلی سطح سے وابستہ ہے۔ یہ ٹائپ 2 ذیابیطس والے مریضوں میں دل کی بیماری کا خطرہ کم کرسکتے ہیں

ذیابیطس ٹائپ 2 کے لیے انار کا واحد فائدہ نہیں ہے۔ حالیہ دنوں میں جائزہ لینے سے پتہ چلا ہے کہ انار میں کچھ ایسےمرکبات ہیں جن سے خون میں شوگر کے لیول کو کنٹرول کیا جا سکتا ہے اور یہ آکسیڈیٹیو تناؤ اور خلیوں کے نقصان سے بھی بچاتے ہیں۔

صحت مندانہ خصوصیات

غذائی ماہرین اور غذائیت کی تعلیم سے متعلق آر ڈی ، سارہ پفلیوگریڈ ، ایم ڈی کا کہنا ہے کہ ، “انار میں اینٹھوسائننز بہت زیادہ ہیں ، جو مضبوط اینٹی آکسیڈینٹس ہیں اور اسی وجہ سے انار کے دانے روبی کے سرخ رنگ کے خوبصورت نگوں کی طرح دکھائی دیتے ہیں ۔ ۔” وہ بتاتی ہیں کہ انٹی آکسیڈینٹس بنیادی وجہ ہیں جو صحت کے لئے فائدہ مند ہے ۔

” جسم کے مضتلف حصوں میں سوزش کی وجہ دل کی بیماری ، ہائی بلڈ پریشر اور ٹائپ 2 ذیابیطس بھی ہے ۔ ماہرین کا خیال ہے کہ انار میں پائے جانے والے اینٹی آکسیڈینٹ اس سوزش کی روک تھام میں مدد گار ہیں ۔کچھ حالیہ مطالعات سے معلوم ہوا ہے کہ انار کا جوس پینے سے بلڈ پریشر کو کم کرنے میں مدد مل سکتی ہے۔”

مزید فوائد

سچ تو یہ ہے کہ ، انار کھانے کا آسان ترین طریقہ یہ ہے کہ بیج سمیت چبا کر کھائیں۔ پاتھک کہتے ہیں ، “میں اور میرے بچے انار کے رسیلے اور خوبصورت بیجوں سے پیار کرتے ہیں اور چبا کر کھانے سے لطف اندوز ہوتے ہیں۔” میں انہیں دہی یا ترکاریوں میں ڈال کر یا سینڈوچ میں لپیٹ کر یا فروٹ چاٹ کے طور پر بھی استعمال کرنے کے لئے کہتا ہوں ۔

آخر میں

جیسا کہ تمام کھانے پینے کی چیزوں کی طرح انار کو بھی روزانہ کے کھانوں می شامل کیا جا سکتا ہے ۔ اس کے استعمال سے سے صحت میں بہت بہتری لائی جا سکتی ہے ۔ کئی امراض سے بچا جا سکتا ہے ۔ جلد کو خوبصورت اور چمکدار بنایا جا سکتا ہے ۔ انار کے رس کا روزانہ استعمال خون کی کمی کو بھی دور کرتا ہے ۔ یہ خون می شوگر لیول کو کنٹرول کرتا ہے ۔ انار مین موجود فائبر ہاضمہ کو درست کرتا ہے ۔ خون کی نلیوں کی سوجن دور کرتا ہے جس سے دل کی بیماری کا خطرہ کم رہتا ہے ۔ یہ قدرتی اسپرین کی گولیوں کی طرح بھی ہے ۔ انار خون کو پتلا کرتا ہے یہ خون کے تھکوں کو کم کرتا ہے ۔ جسم میں موجود زہریلے مادے کو باہر نکال دیتا ہے ۔ کینسر جیسی خطرناک بیماریو کو بھی بڑھنے سے روکتا ہے ۔ اس میں اینٹی آکسیڈنٹ کی مقدار بہت زیادہ ہے ۔جس سے جسم کے ٹاکسنس باہر نکل جاتے ہیں ۔

شیئر کریں
علی نثار
مصنف: علی نثار
علی نثار صاحب کا تعلق حیدرآناد انڈیا سے ہے ۔ یہ کینڈا میں مقیم ہیں۔ بہترین افسانہ نگار ، ناقی اور مضمون نگار ہیں ۔ ان کے افسانے اردو کے تمام اہم رسائل میں شائع ہوتے رہتے ہیں ۔ عالمی سطح پہ ان کی تحریروں کو مقبولیت حاصل ہے ۔ پیشے سے بزنس مین ہیں ۔

کمنٹ کریں