ذیابیطس/انسپائڈس: پیشاب کا بار بار آنا

, ذیابیطس/انسپائڈس: پیشاب کا بار بار آنا

تحریر ؤ تحقیق : مبین احمد

جب کسی خرابی کی وجہ آپ کا جسم Fluids کی سطح کو مناسب طریقے سے متوازن نہیں رکھ پاتا تو گردے اس توازن کو برقرار رکھنے میں مدد کرتے ہیں اورخون کے بہاؤ سے Fluids کو نکال کر مثانے میں عارضی طور پر سٹور کردیتے ہیں ۔اب یہ مثانے پہ بوجھ بنتا ہے جسکی وجہ سے بار بار پیشاب کرنے کی ضرورت محسوس ہوتی ہے اور پیاس بھی بار بار لگتی ہے اس بیماری کو “ذیابیطس انسپائڈس” اور مختصراً Di کہتے ہیں ۔میں نے اکثر دیکھا ہے لوگ اس بارے میں کافی کنفیوژ ہوتے ہیں اور اسے عام ذیابیطس سمجھ کے الجھن کا شکار رہتے ہیں۔ اور بہت سے معالجین بھی کم علمی کے باعث اسکو زیابیطس سمجھتے ہیں جو کہ انتہائی غلط بات ہے۔کیونکہ یہ ایک بالکل مختلف بیماری ہے اسکا زیابیطس کے ساتھ کوئی تعلق نہیں ہے اسکی میڈیسنز بھی مختلف ہوتی ہیں –

ذیابیطس انسپائڈس کےوجوہات

دراصل ایک ہارمون Vasopressin (AVP) جسکو Antidiuretic hormone (ADHبھی کہتے ہیں یہ ہارمون پیشاب کو کنٹرول کرنے میں مدد کرتا ہے
یہ دماغ کے ایک حصے #ہائپوتھلمس میں بنتا ہے اور دماغ کی بنیاد میں پائے جانے والے ایک چھوٹے سے پٹیوٹری غدود میں سٹور ہو جاتا ہے۔
بعض اوقات سر کے اس حصے میں چوٹ لگنے یا ٹیومر یا پھر سرجری سے اس کو نقصان پہنچتا ہے جسکی وجہ سے یہ سب مسائل پیش آتے ہیں ۔
بعض اوقات یہ گردوں کی خرابی کے سبب بھی ہوتا ہے اسکو نیفروجینک ذیابیطس انسپائڈس” یا مختصراً NDI کہتے ہیں ۔ یہ عموماً گردوں کی ڈیفکٹیو Tubules کی وجہ سے ہوتا ہے
اور یہ مسئلہ عموماً رینل ڈیزیز ، Lithium کی زیادتی ، ہائپوکلیمیا اور اسکے علاوہ مختلف میڈیکیشنز کے سائیڈ افیکٹس کے سبب ہوسکتا ہے ۔
اسکی ایک اور قسم جسے “Dipsogenic Diabetes Insipidusبھی کہا جاتا ہے- اسکی بنیادی وجہ ضرورت سے زیادہ مقدار میں سیال پینا ہے

ہائپوتھلمس میں پیاس کو کنٹرول کرنے والے میکانزم کو پہنچنے والے نقصان کی وجہ سے “Primary polydipsia ہوسکتا ہے
حمل کے دوران اگر ایسا ہو تو اسے “Gestational Diabetes Insipidus کہتے ہیں یہ دراصل ایک انزائم کے سبب ہوتا ہے جو ماں میں ADH کو ختم کر دیتا ہے۔

ذیابیطس انسپائڈس کی علامات


بہت زیادہ پیاس جسے بجھایا نہیں جاسکتا (پولیڈپسیا) ، پیشاب کی کثیر مقدار (پولیوریا) ، بے رنگ یورین، پیشاب کرنے کے لئے رات کے وقت اکثر جاگتے رہنا،خشک جلد، قبض، کمزور پٹھے اور Bed Wettingوغیرہ ۔

ذیابیطس انسپائڈ علاج


سب سے پہلے ADH بلڈ ٹیسٹ سے ڈائیگنوز ہوجانے کے بعد زیابیطس انسپائڈس کو انٹی ڈائوریٹکس ہارمون تھراپیز یعنی پیشاب روکنے والی ادویات جیسا کہ Desmopressin سے کنٹرول کیا جاتا ہے۔
اس میں انجیکشنز، ٹیبلٹس یا پھر Nasal Spray وغیرہ میں سے کوئی ایک طریقہ علاج سے استفادہ حاصل کیا جاسکتا ہے۔
جس سے بار بار لگنے والی پیاس اور یورنیشن سے نجات دینے کے ساتھ ساتھ Dehydration سے بھی بچاتی ہیں۔
یاد رہے یہ صرف زیابیطس انسپائڈس کے بارے میں تھا اسکے علاوہ نیفروجینک اور ڈپسوجینک زیابیطس کا علاج مختلف ہوتا ہے ۔
اسکے علاوہ بار بار پیشاب آنے کی وجہ پروسٹیٹ کا بڑھ جانا یا Uti وغیرہ ؤ دیگر کئی وجوہات ہوسکتی ہیں ۔
لہٰذا کسی بھی قسم کی کمپلیکیشنز سے بچنے کے لیئے کسی اچھے Nephrologist یا Endocrinologist ڈاکٹرز کے پاس تشریف لے جائیں ۔

شیئر کریں
مبین احمد کا تعلق نورپورتھل ضلع خوشاب سے ہے وہ ایک کمپیوٹر پروگرامر اور "فل اسٹیک ویب ڈیولپر" ہیں ۔ اس کے ساتھ ساتھ سائنس فکشنز اور دیگر موضوعات پر مضامین اور کالم لکھتے ہیں ۔ ان کے کالم اور مضامین اہم ویب سائٹ پہ شائع ہوتے ہیں

کمنٹ کریں