, لونگ کے فائدے

لونگ ایک سدا بہار درخت کی پھولوں کی کلیاں ہیں ۔ جسے سایجیئم ارومائٹم بھی کہا جاتا ہے۔اس کے پودے زمینی اور پہاڑی دونوں قسم کے ہوتے ہیں ۔ اس ورسٹائل مصالحے کو گرم مصالحے کے طور پہ جانا جاتا ہے ۔ اسے گوشت ،مشروبات ، کیک ، مٹھائی وغیرہ میں ذائقہ شامل کرنے کے لئے استعمال کیا جاتا ہے۔

آپ لونگ کو جنجربریڈ بیکڈ سامان کا ایک اہم اجزاء یا ہندوستانی کھانوں میں ایک اہم مسالا کے طور پر جان سکتے ہیں۔

لونگ کو ایک میٹھا اور خوشبودار مصالحے کے طور پر جانا جاتا ہے ، لیکن اسے قدیم زمانے سے روایتی دوائیوں میں بھی استعمال کیا جاتا رہا ہے ۔

تحقیق سے یہ معلوم ہوا ہے کہ لونگ میں موجود مرکبات میں صحت کے بہت سے فوائد ہو سکتے ہیں ۔جیسے جگر کی صحت کو بہترین بناتا ہے ۔ بلڈ شوگر کی سطح کو نارمل کرنے میں مدد کرتا ہے ۔

لونگ میں فائبر ، وٹامنز اور دیگر معدنیات ہوتے ہیں لہذا اپنے کھانے میں ذائقہ لانے کے لئے لونگ کا استعمال کچھ اہم غذائی فائدہ بھی دیتا ہے ۔

ایک چائے کا چمچ (2 گرام) زمینی لونگ (4 ٹرسٹڈ ماخذ) پر مشتمل ہے:

کیلوری: 6
کاربس: 1 گرام
فائبر: 1 گرام
مینگنیج: روزانہ ویلیو کا 55 فیصد (ڈی وی)
وٹامن کے: ڈی وی کا 2٪
دماغی فنکشن کو برقرار رکھنے اور مضبوط ہڈیوں (5 ٹرسٹڈ سورس ، 6 ٹرسٹڈ سورس) کے لئے مینگنیج ایک ضروری معدنیات ہے۔

لونگ میں ینگنیج کا ایک بھرپور ذخیرہ ہونے کے باوجود لونگ صرف تھوڑی مقدار میں استعمال ہوتا ہے اور کم مقدار میں استعمال کی وجہ سے غذائی اجزا فراہم نہیں کرتی ہے۔حالانکہ لونگ میں کیلوری کی مقدار کم ہے لیکن مینگنیج کا ایک بھرپور سورس ہے۔ ۔

کئی اہم وٹامنز اور معدنیات کے علاوہ لونگ میں اینٹی آکسیڈینٹس سے بھر پور ہیں۔ اینٹی آکسیڈینٹ وہ مرکبات ہیں جو آکسیڈیٹیو تناؤ کو کم کرتے ہیں اور دائمی بیماری سے نجات میں اہم کردار ادا کرتے ہیں۔

لونگ میں یوجینول نامی ایک مرکب بھی ہوتا ہے ، جسے قدرتی اینٹی آکسیڈینٹ کے طور پر کام کرتے دکھایا گیا ہے۔ ایک ٹیسٹ ٹیوب پہ تحقیق سے پتہ چلا ہے کہ ایجینول نے آزادانہ ریڈیکلز کی وجہ سے آکسیڈیٹیو نقصان کو وٹامن ای کے مقابلے میں پانچ گنا زیادہ مؤثر طریقے سے روک دیا ۔

اپنی غذا میں لونگ سمیت دیگر اینٹی آکسیڈینٹ سے بھرپور غذاوں کو شامل کرنا آپ کی مجموعی صحت کو بہتر بنانے میں معاون ثابت ہوسکتا ہے۔ لونگ میں اینٹی آکسیڈینٹ زیادہ ہوتے ہیں

کچھ تحقیق بتاتی ہے کہ لونگ میں پائے جانے والے مرکبات کینسر سے بچنے میں مددگار ثابت ہوسکتے ہیں۔ایک تحقیق سے پتہ چلا ہے کہ لونگ کے استعمال نے ٹیومر کی افزائش کو روکنے میں مدد فراہم کی اور کینسر کے خلیوں کو مارنے میں بھی مددگار ثابت ہوا ۔ ایکا ور تھقیق نے بھی اسی طرح کے نتائج کا مشاہدہ کیا ۔ جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ لونگ کا تیل غذائی نالی کے کینسر کے 80 فیصد سیل کو ختم کر دیتا ہے۔

لونگ میں پائے جانے والے یوجینول میں بھی اینٹینسیسر کی خصوصیات موجود ہیں۔ مگر یہ بات ذہن میں رکھیں کہ ان ٹیسٹ ٹیوب اسٹڈیوں میں لونگ کا عرق ، لونگ کا تیل ، اور یوجینول کی بہت زیادہ مقدار ہوتی ہے۔

یوجینول زیادہ مقدار میں زہریلا ہے اور لونگ کے تیل کو زیادہ مقدار پینا جگر کو نقصان پہنچا سکتا ہے ، خاص کر بچوں میں۔ اس بات کا تعین کرنے کے لئے مزید تحقیق کی ضرورت ہے کہ کہ کتنی مقدار لینی چاہئے جس سے فائدہ حاصل کی اجا سکے ۔

لونگ میں اینٹی مائکروبیل خصوصیات موجود ہیں ، یعنی وہ بیکٹیریا جیسے مائکروجنزموں کی افزائش کو روکنے میں مدد کرسکتے ہیں۔ تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ لونگ کے تیل نے تین عام اقسام کے بیکٹیریا کو ہلاک کیا ۔جیسے ای کولی جو کھانے کو زہریلا بنانے کا سبب بن جاتا ہے

لونگ کی اینٹی بیکٹیریل خصوصیات صحت کو بہتر بنانے میں معاون ثابت ہوسکتی ہیں۔ ایک تحقیق میں لونگ سے نکالی جانے والی مرکبات پائی گئیں جس میں دو قسم کے بیکٹیریا کی افزائش کو روکنے میں مدد ملی ہے جو مسوڑوں کی بیماری دور کرتا ہے۔

40 افراد میں ہونے والی ایک اور تحقیق میں چائے کے درخت کا تیل ، لونگ اور تلسی پر مشتمل جڑی بوٹیوں کے ماؤتھ واش کے اثرات کی جانچ کی گئی۔ 21 دن تک جڑی بوٹیوں کے ماؤتھ واش کا استعمال کرنے کے بعد ، انہوں نے مسوڑھوں کی صحت میں بہتری کے ساتھ ساتھ منہ میں پلاک اور بیکٹیریا کی مقدار میں کمی نوٹ کی ۔ لونگ کے تیل کا باقاعدگی سے برش کے ساتھ استعمال کرنے سے لونگ کے اینٹی بیکٹیریل اثرات آپ کی صحت کو فائدہ پہنچا سکتے ہیں
٭٭٭٭٭
اپنی تحریر اس میل پہ ارسال کریں
lafznamaweb@gmail.com

شیئر کریں

کمنٹ کریں