افسانہ :ہمیشہ دیر ھوجاتی ھے مجھ سے

افسانہ نگار : رفعت مہدی

, افسانہ :ہمیشہ دیر ھوجاتی ھے مجھ سے

حمزہ کو رخصت کرنے کے بعد چند ایک کام نمٹا کر میں کھڑکی کے قریب کرسی پر بیٹھ گئی۔اور اپنے واحد دوست اس نیچی چھت ، گول برآمدے والے زرد مکان کو پر تجسّس نگاھوں سے دیکھنے لگی
جی ہاں،، اس پورے علاقے میں جس چیز نے مجھے متاثر کیا ھے وہ یہی مکان ھے،عجیب سی کشش محسوس ھوتی ھے خدا جانے کیوں ایسا لگتا ھے کہ یہ گھر بھی میری طرح تنہائی کا شکار ھے،، اس کی دیواروں میں پڑے شگاف اور جا بجا اکھڑے پلاسٹر میری ذات کی خستگی سے ھم آھنگ معلوم ھوتےہیں،، جنگلی بیلوں نے اسے اپنی آغوش میں سنبھالا ھوا ھے۔۔۔ اطراف کی زمین اور سڑکیں اسکی بلندی کو نگلنے کے درپئے معلوم ھوتی ھیں۔۔


میرا ذہن غیر ارادی طور پر اس مکان سے وابستہ پر اسرار کہانیاں تلاش کرتا رہتا ھے ،، اس محلے میں ، میں بالکل اجنبی ھوں، ابھی تک کسی سے بات چیت بھی نہیں ھوئی ھے،،،۔زیادہ تر زمینیں بلڈرز نے لی ہوئی ہیں،کچھ اپارٹمنٹ زیر تعمیر ہیں ۔۔۔۔دور دور پر چھوٹے چھوٹے مکانوں میں نوکری پیشہ افراد یا طالب العلم رہتے ہیں۔۔۔۔ بچے شائد اس جگہ بہت کم ھیں۔۔۔کیونکہ اس محلے میں ھمہ وقت ایک مضمحل کردینے والی خاموشی مسلط رہتی ۔۔جو میری ذات کے سناٹوں سے سرگوشی کیا کرتی ھے۔۔۔۔
اس گھر میں ایک بزرگ میلگجے کرتے دھوتی۔۔ میں ملبوس اکثر پرانی وضع کی آرام کرسی پر نیم دراز اخبار بینی میں مصروف نظر آتے ہیں۔۔۔میرا بہت دل چاہتا ھے کہ سامنے والے گھر سے کوئی کہانی کشید کرلوں۔۔۔۔بزرگ ھستی کے پاس بیٹھ کر کچھ گفتگو ہی کرلوں
مگر میں، حمزہ کے بغیر گھر سے باہر نہیں نکلتی ۔۔۔۔ یہاں رہنے والوں کی تفتیشی نگاہیں مجھے اچھی نہیں لگتیں۔۔۔۔۔


میں فطرتاً بہت محتاط۔اور بزدل واقع ھوئی ھوں۔۔۔۔۔ شائد میری تنہائی کا سبب بھی میری یہ فطری جھجھک ھے۔۔۔۔۔
کتنے دنوں سے صرف سوچ ہی رہی ھوں کہ حمزہ کے ساتھ سنڈے یا ویک اینڈ پر”ان ” سے مل آؤں۔۔۔۔۔ ورنہ یہ سناٹا تو مجھے نگل ہی جائے گا۔۔۔! بچے کے اگزامس سر پر ہیں اسے زیادہ ڈسٹرب بھی نہیں کرنا چاھتی۔۔۔۔۔۔۔
آج ابھی تک وہ باہر نہیں ائے۔۔۔۔۔۔۔شائد کل بھی نظر نہیں آئے تھے۔۔؟ کہیں گئے ہوئے ہیں۔۔۔ یا بیمار ھوں۔۔۔۔۔؟۔ تنہا۔۔انسان۔۔۔۔۔
الله جانے کیوں اونچے قد ، سفید بالوں،اور ملگجی دھندلی ، گم گم سی آنکھوں والےبندے میں۔۔مجھے اتنی کشش محسوس ھوتی ھے۔۔۔۔۔ سوائے اخبار اور دودھ والے کے کوئی یہاں آتا بھی نہیں ھے۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔
انشاء الله۔۔اج ضرور ملنے جاؤنگی۔۔۔۔۔
میری متجسس نگاہیں اس گھر کی جنگلی بیلوں کی چلمن سے نیم پوشیدہ کھلی کھڑکی کا جائزہ لیتے ہوئے تھک سی گئیں۔۔۔ صبح کا اخبار بھی برآمدے میں پڑا ہواھے اور دودھ کی بوتل دروازے سی ٹکی نظر آرہی ھے۔۔۔
مجھے بیچینی نے گھیرنا شروع کر دیا۔۔ ۔۔۔۔۔ کیا مجھے جاکر دیکھنا چاہئیے؟۔۔۔۔ کسی سے کہوں۔۔۔۔۔ ۔۔ فون ھوگا وہاں۔۔۔۔۔مگر نمبر۔۔۔۔؟ نام تک تو میں جانتی نہیں۔!! مجھے خود پر غصہ آنے لگ۔۔ قصور میرا ھی ھے۔۔۔۔۔ ھمیشہ دیر ھوجاتی ھے مجھ سے۔۔۔میں آگے بڑھ کر کسی سے کیوں نہیں مل سکتی۔۔۔۔۔؟۔۔۔ اب ایسی بچی بھی نہیں نوجوان بچے کی ماں ھوں۔۔۔۔مگر۔۔۔ ۔۔۔۔۔ اعتماد کا فقدان ہی رہا ھے۔۔۔۔۔۔۔ میں ابھی بھی جا سکتی ھوں۔۔۔۔۔۔۔۔
اکیلے۔۔۔۔۔؟
۔کیا ھوا۔۔۔۔ کوئی کچھ نہیں کہے گا۔۔۔۔ مجھے ہنسی آگئی۔۔۔ حد ھے۔۔۔کون سا ماؤنٹ ایورسٹ سر کرنا ھے۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔مگر۔۔۔ ۔شائد۔۔۔ وہ۔۔ ہندو ھیں۔۔۔۔۔
ھممم۔۔۔۔
۔نمستے،، کر لونگی۔ ۔۔
اور کیا۔۔۔۔۔۔
۔ میں نے ایک عزم کے ساتھ الماری سے چادر نکالی خود کو اچھی طرح لپیٹتے ھوئے باہر نکل آئی۔۔ پیپر پڑا ہوا تھا میں نے بھی آج پیپر نہیں دیکھا۔۔۔۔انہہ۔۔۔رہتا ہی کیا ھے ۔سوائے دنگے فساد۔۔ قتل عصمت دری،، ۔۔۔۔۔انسان مسلسل نفرت اور خوف کے حصار میں جی رہا ھے۔۔۔۔۔
اووہ۔۔۔ دروازے کو تالا لگانا ضروری ھے۔۔۔۔ وآپس کنجی لینے کمرے میں آئی تو بے ساختہ نظر کھلی کھڑکی کی طرف اٹھ گئ۔۔۔۔دو جنٹل مین انکے دروازے پر کھڑے نظر آئے۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔کون ہیں یہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ؟ ؟ اتنے دنوں میں پہلی بار کوئی یہاں نظر آیا۔۔۔۔سرکاری بندے لگ رہے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔اب نہیں جاؤنگی۔۔۔۔۔۔ شائد گھر میں کوئی نہیں ھے۔۔۔۔ دروازہ اندر سے بند ھے۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ دروازہ کھٹکھٹا نے کی تیز آواز۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ الہیٰ خیر!..


دیکھتے دیکھتے چار پانچ۔۔۔ پھر۔ دس پندرہ۔لوگ جمع ہوگئے۔۔۔۔ ۔۔۔میرے ہاتھ پاؤں ٹھنڈے ھوئے جارھے ھیں۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔باہر نکل کر پتہ کرنا چاہئے۔۔۔۔ معاملہ کیا ھے۔۔۔۔
سب ہی کچھ نہ کچھ بول رہے ہیں۔۔ملی جلی آوازیں اب شور سے مشابہ ھوتی جارھی ہیں۔۔
کھڑی سے اندر جاؤ۔۔۔
دروازہ توڑ دو۔۔ ۔۔۔
نہیں۔۔۔۔نہیں پولیس اسٹیشن خبر کرو۔۔۔ ابھی ہاتھ نہیں لگانا۔۔۔۔
چھت سے آنگن میں جاؤ اور دروازہ کھول دو۔۔۔۔
کون جائے گا۔؟
پنڈت جی کو کب سے نہیں دیکھا۔۔۔۔۔؟
شائد کل سے۔۔۔
پھر میں کھڑکی میں ہی بیٹھ گئی۔۔ حوصلہ جواب دے رہا تھا۔۔۔
کسی نے تھانے فون کیا۔۔
جی سر ۔۔۔۔ نہیں ۔۔۔ ریسیوینگ نہیں ملی۔۔۔ کوئی نہیں ھے۔۔۔ پتہ یہی ھے۔۔۔۔۔جی سر۔۔۔
مجمع کافی بڑھ گیا۔۔۔۔اب کچھ سمجھ نہیں آرہا ۔۔۔۔۔۔
پولیس نے دروازہ توڑ دیا۔۔۔۔پرانہ دروازہ آسانی سے قبضے پر جھول گیا۔ ۔۔۔۔
پھر بہت تیزی سے بھیڑ چھٹنے لگی۔۔۔۔
میں دروازے سے نکل آئی۔۔۔۔۔
کیا۔۔۔۔۔۔ھوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟
ڈرتے ،ڈرتے لفظ زبان سے باہر آئے۔۔۔
ایک شخص نے غور سے مجھے دیکھا۔۔۔۔۔۔
پنڈت جی کا دیھانت ھو گیا۔۔۔ ۔۔۔
آپ نے ۔۔اندر جاکے دیکھا ہے۔؟۔
جی۔۔۔۔ آنگن میں مونہہ پر پیپر ڈالے پڑے ہیں۔۔۔۔؟ شائد۔ ہارٹ اٹیک۔۔۔۔۔
پرسوں دنگے میں مرنے والا۔۔۔۔ پنڈت جی کا اکلوتا بیٹا۔۔۔۔نیتا جی کے خاص آدمیوں میں تھا۔۔۔۔۔۔ تصویر چھپی ہے۔۔۔۔۔۔۔!
میرے جسم میں سنسناہٹ ھونے لگی۔۔۔واپس کمرے میں آگئی کھڑکی بند کر کے بستر پر بیٹھ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چائے بھی پنڈت جی کی لاش کی طرح ٹھنڈی ھوچکی تھی
مجھے اس کہانی کی توقع ہرگز نہیں تھی!
——
اپنی تحریر اس میل پہ ارسال کریں
lafznamaweb@gmail.com

شیئر کریں

کمنٹ کریں