انسان موٹا کیوں ہوتا ہے؟

, انسان موٹا کیوں ہوتا ہے؟

مضمون نگار : قدیر قریشی
بشکریہ سائنس کی دنیا

جب انسان زیادہ کھاتا ہے اور کم کام کرتا ہے تو انرجی جسم کے اندر ہی بنتی رہتی ہے اور کہیں پر استعمال نہیں ہوتی ،بنتے بنتے وہ انرجی
کیرسٹرول میں تبدیل ہوتی ہے،جس کی وجہ سے انسان موٹا ہونا شروع ہو جاتا ہے۔


انسانی جسم کا نظام ایک بینک اکاونٹ کی طرح سے ہے۔ آپ کے جسم کی چربی بینک بیلنس ہے- آپ جو کچھ کھاتے ہیں وہ بینک ڈیپازٹ ہے- آپ جو توانائی خرچ کرتے ہیں وہ بینک سے رقم نکالنا ہے- آپ کا بینک بیلنس تب بڑھتا ہے جب آپ زیادہ رقم ڈیپازٹ کروائیں اور کم رقم نکالیں- اسی طرح موٹاپا تب ہوتا ہے جب آپ زیادہ کیلوریز غذا کی صورت میں لے رہے ہوں لیکن کیلوریز کم خرچ کر رہے ہوں- یہ اضافی کیلوریز جسم میں چربی کی صورت میں جمع ہوتی رہتی ہیں اور مٹاپا پیدا کرتی ہیں- اپنی خوراک کو کم کیجیے، ورزش کیجیے، بہت سی چہل قدمی کیجیے تو کوئی وجہ نہیں کہ وزن کم نہ ہو۔ بعض اوقات کسی جینیاتی نقص کی وجہ سے بھی مٹاپا ہونے لگتا ہے لیکن زیادہ تر صورتوں میں مٹاپے کی وجہ صرف زیادہ کھانا اور مشقت طلب کام کم کرنا ہی ہوتی ہے۔


محض ورزش کرنے سے مٹاپا کم نہیں ہوتا- یہ ہمارے ہاں بہت بڑی غلط فہمی ہے کہ ورزش کرنے سے مٹاپا کم ہو جاتا ہے- کبھی کسی ایسی مشین پر ورزش کیجیے جس میں کیلوریز بھی دکھائی جاتی ہیں تو اس ورزش میں استعمال ہوئیں- آپ دیکھیں گے کہ عموماً بیس منٹ کی ورزش میں دو سو کیلوریز سے زیادہ استعمال نہیں ہوتیں (البتہ اگر بہت ہی زیادہ محنت طلب ورک آؤٹ ہو تب کچھ زیادہ کیلوریز استعمال ہوتی ہیں)- اس سے کہیں زیادہ کیلوریز ملک شیک کے ایک گلاس میں ہوتی ہیں جسے ہم سنیک سمجھ کر پی جاتے ہیں۔


ڈائٹ پر کنٹرول وزن کم کرنے کا واحد طریقہ ہے- ڈائٹ پر کنٹرول سے مراد ڈائٹنگ نہیں ہے جو چند دنوں کے لیے کی جائے بلکہ مستقل طور پر اپنی خوراک کو کم کر دینا ہے- اس کے ساتھ ورزش کرنا بھی ضروری ہے تاکہ کیلوریز زیادہ برن ہوں۔ہارمونز میں گڑبڑ بھی بڑا مسئلہ ہے لیکن ہارمونز میں گڑبڑ سے دماغ میں بھوک اور پرشکم ہونے کا احساس پیدا کرنے والے حصوں کے کام میں خلل پڑ جاتا ہے جس سے بھوک زیادہ لگنے لگتی ہے اور پیٹ بھرنے کا احساس دیر سے ہوتا ہے- اس کا نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ انسان جسم کی ضرورت سے زیادہ کھانے لگتا ہے- اگر بھوک رکھ کر کھایا جائے تو وزن اس حالت میں بھی کم کیا جا سکتا ہے اگرچہ یہ زیادہ مشکل کام ہے لیکن ناممکن نہیں ہے- حتمی بات یہی ہے کہ اگر جسم میں ضرورت سے زیادہ کیلوریز جا رہی ہیں تو جسم میں مٹاپا آنے لگتا ہے۔

 

شیئر کریں
قدیر قریشی بطور سائنس رائٹر سائنسی ادبی حلقوں میں مقبولیت رکھتے ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ مشہور اردو سائنسی فورم "سائنس کی دنیا" کے سرپرست اعلی بھی ہیں۔

کمنٹ کریں