خالد کا ختنہ

افسانہ نگار : غضنفر
lafznamaweb@gmail.com

, خالد کا ختنہ

جو تقریب ٹلتی آ رہی تھی، طے پا گئی تھی۔ تاریخ بھی سب کو سوٹ کر گئی تھی۔ پاکستان والے خالو اور خالہ بھی آ گئے تھے اور عرب والے ماموں ممانی بھی۔ مہمانوں سے گھر بھر گیا تھا۔

بھرا ہوا گھر جگمگا رہا تھا۔ در و دیوار پر نئے رنگ و روغن روشن تھے۔ چھتیں چمکے لیے کاغذ کے پھول پتوں سے گلشن بن گئی تھیں۔ کمروں کے فرش آئینہ ہو گئے تھے۔ آنگن میں چمچماتی ہوئی چاندنی تن گئی تھی۔ چاندنی کے نیچے صاف ستھری جازم بچھ چکی تھی۔

باہر کے برآمدے میں بڑی بڑی دیگیں چڑھ چکی تھیں۔ باس متی چاولوں کی بریانی سے خوشبوئیں نکل رہی تھیں۔ قورمے کی دیگوں سے گرم مصالحوں کی لپٹیں ہواؤں سے لپٹ کر دُور دُور تک پھیل رہی تھیں۔دھیرے دھیرے محلّہ پڑوس کی عورتیں بھی آنگن میں جمع ہو گئیں۔ بچّوں کی ریل پیل بڑھ گئی۔رنگ برنگ کے لباس فضا میں رنگ گھولنے لگے۔ سونے چاندی کے گہنے کھن کھن چھن چھن بولنے لگے۔ پرفیوم کے جھونکے چلنے لگے۔ دل و دماغ میں خوشبوئیں بسنے لگیں۔ میک اپ جلوہ دکھانے لگا۔ چہروں سے رنگین شعاعیں پھوٹنے لگیں۔ ابرق سے آراستہ آنکھوں کی جھلملاہٹیں جھلمل کرنے لگیں۔ سرخ سرخ ہونٹوں کی مسکراہٹیں کھلکھلا پڑیں۔ ماحول میں رنگ نور، نگہت تینوں رچ بس گئے۔ جگمگاتا ہوا گھر اور جگمگا اُٹھا۔ابو امّی بے حد خوش تھے کہ خوشیاں سمٹ کران کے قدموں میں آ پڑی تھیں۔ دلوں میں بے پناہ جوش و خروش تھا کہ جوش ایمانی اور پرُ جوش ہونے والا تھا۔ آنکھیں پر نور تھیں کہ نور نظر سنّت ابراہیمی سے سرفراز ہونے جا رہا تھا۔ چہرے پرتاب و تب تھی کہ لختِ جگر کی مسلمانی کو تاب و توانائی ملنے والی تھی۔ سانسیں مشک بار تھیں کہ تمنّاؤں کے چمن میں بہار آ گئی تھی۔تقریب کا آخری مرحلے شروع ہوا۔مہمان برآمدوں اور کمروں سے نکل کر آنگن میں آ گئے۔ چاندنی کے نیچے بیٹھے ہوئے لوگ کھڑے ہو گئے ——فرش کے وسط میں اوکھلی آ پڑی۔ اوکھلی پر پھول دار چادر بچھ گئی۔ خوان تازہ پھولوں کے سہرے سے سج گیا۔ ململ کا کڑھا ہوا کرتا پیکٹ سے باہر نکل آیا۔بزرگ نائی نے اپنی بغچی کھول لی۔ استراباہر آ گیا۔ کمانی تن گئی۔ راکھ کی پڑیا کھل گئی۔خالد کو پکارا گیا مگر خالد موجود نہ تھا۔ بچّوں سے پوچھ تاچھ کی گئی۔ سب نے نفی میں سرہلا دیا۔ ابو امّی کی تشویش بڑھ گئی۔ تلاش جاری ہوئی۔ ابو اور میں ڈھونڈتے ہوئے کباڑ والی اندھیری کوٹھری میں پہنچے۔ ٹارچ کی روشنی میں دیکھا تو خالد ایک کونے میں دیر تک کسی دوڑائے گئے مرغ کی طرح دُبکا پڑا تھا۔’’خالد بیٹے ! تم یہاں ہو اور لوگ ادھر تمہارا انتظار کر رہے ہیں۔ آؤ، چلو! تمہاری ممی پریشان ہو رہی ہیں۔ ‘‘’’نہیں ابو !میں ختنہ نہیں کراؤں گا۔ ‘‘خالد منہ بسورتے ہوئے بولا۔


خالد سے ختنے کی بات چھپائی گئی تھی مگر شاید کچھ دیر پہلے کسی نے اسے بتا دی تھی۔’’ٹھیک ہے، مت کرانا۔ مگر باہر تو آ جاؤ۔ !ابو نے بڑے پیارسے یقین دلایا۔ مگر خالد دیوارسے اس طرح چمٹ کر بیٹھا تھاجیسے دیوار نے کسی طاقت ور مقناطیس کی طرح اسے جکڑ لیا ہو۔ ہم نے اس کا ایک ہاتھ پکڑ کر باہر کھینچنے کی کوشش کی مگر اس کا دوسرا ہاتھ دیوارسے اس طرح چپک گیا تھاجیسے وہ کوئی سانپ ہو جس کا اگلا حصہ کسی بل میں جا چکا ہو اور دم ہمارے ہاتھ میں۔ نہ جانے کہاں سے اس چھوٹے سے بچّے میں اتنی طاقت آ گئی تھی۔ بڑی زور آوری کے بعد مشکل سے اسے کوٹھری سے باہر لایا گیا۔’’امّی!امّی! میں ختنہ نہیں کراؤں گا۔ اس کی آنکھوں میں آنسو آ گئے۔’’اچھّی بات ہے۔ نہ کرانا لیکن یہ نیا کرتا تو پہن لو۔ دیکھو نا سارے بچّے نئے نئے کپڑے پہنے ہوئے ہیں۔ اور یہ دیکھو!یہ سہراکتنا اچھّا ہے۔ تمہارے سرپربہت سجے گا۔ لو، اسے باندھ کر دولھا بن جاؤ۔ یہ سب لوگ تمھیں دولہا بنانے آئے ہیں۔ تمہاری شادی بھی تو ہو گی نا!’’امّی!آپ جھوٹ بول رہی ہیں۔ میں سب جانتا ہوں ‘‘میں کرتا نہیں پہنوں گا۔ میں سہرانہیں باندھوں گا۔ ‘‘’’یہ دیکھو!تمہارے لیے کتنے سارے روپیے لایا ہوں !ابو نے کڑکڑاتے ہوئے دس دس کے ڈھیرسارے نوٹ خالد کے آگے بچھا دیئے۔آس پاس کھڑے بچّوں کی آنکھیں چمک انھیں۔

’’اچھّا!یہ دیکھو! تمہارے لیے میں کیا لایا ہوں ؟پاکستان والے خالو نے امپورٹیڈ ٹافیوں کا ڈبہ کھول دیا۔بچّوں کی زبانیں ہونٹوں پر پھرنے لگیں۔عرب والے ماموں آگے بڑھ کر بولے۔’’دیکھو خالد! یہ کار تمہارے لیے ہے۔ بغیر چابی کے چلتی ہے۔ یوں ——‘‘تالی کی آواز پر کار اِدھر اُدھر دوڑنے لگی۔مگر خالد کی آنکھیں کچھ نہ دیکھ سکیں۔ اس کی نظریں کسی صیّاد دیدہ جانور کی طرح پتلی میں سہمی ہوئی ساکت پڑی رہیں۔ابو، امّی، خالو، ماموں، پیار، پیسہ، ٹافی، کارسب کچھ دے کر تھک گئے۔ خالد ٹس سے مس نہ ہوا۔جھنجھلا کرابوزبردستی پر اُتر آئے۔ خالد کی پینٹ کھول کر نیچے کھسکانے لگے مگر خالد نے کھلی ہوئی پینٹ کے سروں کو دونوں ہاتھوں سے کس کر پکر لیا۔ آنکھوں سے آنسوؤں کے ساتھ لبوں سے رونے کی آوازیں بھی نکلنے لگیں۔ خالد کے آنسوؤں نے امّی کی آنکھوں کو گیلا کر دیا۔ ’’مت روؤ میرے لال! مت روؤ!تم نہیں چاہتے توہم زبردستی نہیں کریں گے۔ تمہارا ختنہ نہیں کرائیں گے۔ ‘‘ امّی نے روندھی ہوئی آواز میں خالد کو دلاسادیا اور اپنے آنچل میں اس کے آنسو جذب کر لیے۔ کچھ دیر تک امّی خاموش رہیں۔ پھر خالد کے سرپرہاتھ پھیرتے ہوئے بولیں۔

’’پچھلے سال تو پھوپھی کے گھر کامران کے ختنے کے وقت تم خود ضد کرتے رہے کہ امّی آپ میرا بھی ختنہ کرا دیجیے مگر آج تمھیں کیا ہو گیا ہے ؟تم اتنے ڈرپوک کیوں بن گئے ؟تم تو بڑے بہادر بچّے ہو۔ تم نے اپنے زخم کا آپریشن بھی ہنستے ہنستے کرا لیا تھا۔ اس میں تو زیادہ تکلیف بھی نہیں ہوتی۔
‘‘’’امّی !میں ختنہ کرانے سے نہیں ڈرتا۔ ‘‘
’’تو؟‘‘’’ابو!آپ ہی نے تو ایک دن کہا تھا کہ جن کا ختنہ ہوتا ہے بدمعاش انہیں جان سے مار دیتے ہیں۔ ‘‘خالد کا جملہ ابو کے ساتھ ساتھ سب کے سروں پر فالج کی طرح گر پڑا۔ سب کی زبانیں اینٹھ گئیں۔ چہکتا ہوا ماحول چپ ہو گیا۔ جگمگاہٹیں بجھ گئیں۔ مسکراہٹیں مرجھا گئیں۔ بچّوں کی اُنگلیاں اپنے پاجاموں میں پہنچ گئیں۔تلاشیوں کا گھناؤنا منظر اُبھر گیا۔ جسم ننگے ہو گئے۔ چاقو سینے میں اُترنے لگے۔ ماحول کا رنگ اُڑ گیا۔ نور پر دھندکا غبار چڑھ گیا۔ خوشبو بکھر گئی۔نائی کا استرابھی کند پڑ گیا۔ راکھ پر پانی پھر گیا۔پاکستان والے خالو نے ماحول کے بوجھل پن کو توڑتے ہوئے خالد کو مخاطب کیا۔
’’خالد بیٹے !اگر تم ختنہ نہیں کراؤ گے تو جانتے ہو کیا ہو گا؟تمہارا ختنہ نہ دیکھ کر تمھیں ختنہ والے بدمعاش مار ڈالیں گے۔ ‘‘
’’سچ ابو ؟‘‘خالد سرسے پاؤں تک لرز گیا۔
’’ہاں، بیٹے !تمہارے خالوسچ کہہ رہے ہیں۔ ‘‘
’’تو ٹھیک ہے میرا ختنہ کر دیجیے۔ ‘‘جھٹ اس کے ہاتھوں سے کھلی ہوئی پینٹ کے سرے چھوٹ گئے۔ پینٹ کولھے سے نیچے سرک آئی۔ خالد ختنے کے لیے تیار تھا۔ مگراس کی رضا مندی کے باوجود کسی نے بھی اس کے سرپرسہرا نہیں باندھا۔ کوئی بھی ہاتھ کرتا پہنانے آگے نہیں بڑھا۔اذیت ناک سکوت جب ناقابل برداشت ہو گیا تو پاکستان والے خالو نے آگے بڑھ کر خالد کو اسی حلیے میں اوکھلی کے اوپر بٹھا دیا۔تقریب کا آغاز ہو گیا مگر نائی کے تھال میں پیسے نہیں گرے۔ نائی نے مطالبہ بھی نہیں کیا۔خاموشی سے اس نے مسلمانی میں راکھ بھری۔ کمانی فٹ کی۔ چمٹے میں چمڑے کوکسا اور اس پر لرزتا ہوا استرارکھ دیا۔ جیسے ختنہ نہیں، گردن کاٹنے جا رہا ہو۔

شیئر کریں

کمنٹ کریں