نظم : کسان

نظم نگار : ڈاکٹر صالحہ صدیقی
lafznamaweb@gmail.com

, نظم : کسان

سورج کی لالی ماتھے پر سجائے
ذمہ داری کی پگڑی سر پر تھامے
کاندھے پر پیٹ بھرنے کا بوجھ لادے
ننگے پاؤں …….
زمین کا بوسہ لیتے آبلے پاؤں
وہ نکل پڑتا تھا ہل اٹھائے
امید کے کھیتوں کی طرف
لہلہاتے کھیتوں میں اگے
امیدوں کے پودوں میں
وہ سینچتا تھا اپنے خوابوں کو
چہرے کی جھریوں میں قید
مسکراتا ہندستان
مسکراتا کسان


جس کی زندگی کھیت کھلیان سے
چولہے کی روٹی تک سمٹی
دن رات قرض کا بوجھ اتارنے کی فکر
دو وقت کی روٹی ملنے کی تمنا
جسے نہ عیش و عشرت کی حسرت
نہ خواہش سیاست یاتاج کی
نظر آسمان پر بارش کے انتظار کی
دل میں دعائیں اچھی فصل ہونے کی
معصوم دل میں معصوم ہندستان
لیکن افسوس


بھسم ہو گیا کسان بھی
سیاست کی آہوتی میں
چھین کر ہل ،پھاوڑا ،کدار
کھڑا کر دیا سیاست کے مایا جال میں
خواب دکھا کر ترقی کا
تجارت کا پاٹھ پڑھاتے ہے
نفع نقصان کے کھیل میں
الجھا دیا کسانوں کو
بیچ کر ہندستان کے سرمائے کو
اب کسانوں کی بولی لگاتے ہیں
لاچار ،لاعلم کسان


لڑ رہا ہے اپنے ہی ملک میں جنگ
اپنے ہی کھیت کھلیانوں کے لیے
اپنے ہی چنے سیاستدانوں کے سامنے
گڑ گڑ ا رہا ہے
نہ کوئی سننے والا ،نہ کوئی سمجھنے والا
ان کے دکھ کو ان کے درد کو ،ان کی فریاد کو
ٹھٹھرتی ٹھنڈی میں
کھلے آسمان میں بیٹھے
انصاف کی آس لگائے
موت کی گھاٹ اتر رہا ہے کسان
ہائے رے ہندستان
تیری سنہری کتاب میں
رقم ہو نے کو ہے ایک سیاہ باب

شیئر کریں
ڈاکٹر صالحہ صدیقی کی پیدائش اعظم گڑھ یو۔پی کی ہے یہ الہٰ آباد میں مقیم ہیں ۔ابتدائی تعلیم مدرستہ البنات،منگراواں،اعظم گڑھ میں حاصل کی انہوں نےپی ۔ایچ۔ڈی کی ڈگری جامعہ ملیہ اسلامیہ نئی دہلی (موضوع : علامہ اقبال کی اردو شاعری میں ڈرامائی عناصر:نگراں وجیہ الدین شہپر رسول )سے حاصل کی ۔ مرتب کئی کتابیں مرتب کی ہیں جن میں اردو ادب میں تانیثیت کی مختلف جہتیں ، ضیائے اردو ’’ضیاء ؔ فتح آبادی ‘‘ ،نیاز نامہ ’’نیاز جیراج پوری :حیات و جہات قابل ذکر ہیں ۔ تصنیفات : علامہ اقبال کی زندگی پر مبنی ڈراما ’’ علامہ ‘‘ تراجم (اردو سے ہندی ) :’’ضیاء فتح آبادی کا افسانوی مجموعہ ‘‘ سورج ڈوب گیاکا (2017)میں ہندی ترجمہ ڈراما ’’علامہ ‘‘ کا ہندی ترجمہ (2017)میں کیا۔ زیر اشاعت : مضامین کا مجموعہ ’’دیداور‘‘مضامین کا مجموعہ ’’نوشتہ‘‘ ، کہانیوں کا مجموعہ ’’حکایات صالحہ ‘‘ بچوں کی کہانیوں کا مجموعہ۔ تحقیقی کام ’’منظوم ڈراما ‘‘، نظموں کا مجموعہ ’’خامہ‘‘ ، خواتین مضامین کا مجموعہ اعزازات و انعامات :اتر پردیش اردو اکیڈمی ایوارڈ 2015’’ڈراما علامہ پہلے ایڈیشن کے لیے،ریاستی سطحی ’’اردو خدمت گار ایوارڈ 2015‘‘احمد نگر ،ضلع اردو ساہتیہ پریشد وہفت روزہ مخدوم ،سنگم نیر۔ ( اردو ادب میں تانیثیت کی مختلف جہتیں کے لیے )،لپ کیئر فاؤنڈیشن کی جانب سے ’’جہانگیری اردو لٹریری ایوارڈ ‘‘ 2015(ڈراما علامہ کے لیے )،اتر پردیش اردو اکادمی انعام ’’نیاز نامہ ‘‘ کے لیے،نوجوان قلمکار اقبال ایوارڈانہیں ان کے سوشل ورک کے لیے ہندستان کی کئی این جی اونے انھیں اعزاز ات سے نوازا ہے۔

کمنٹ کریں