شاعر : راشد جاوید احمد

, نظم

کون ہو تم
آیئنہ تو دیکھو
خوردہ سال سفید ہوتی آنکھیں
حُسن دیکھنے سے عاری
کٹے پھٹے
لرزتے ہونٹ
تعریف سے عاری
آنکھیں تو وہ ہیں
جو دیکھتے نہیں تھکتیں
ہونٹ تو وہ ہیں
جو ہمہ وقت
رطب اللساں
اپنا منصب پہچانو
تمہارے عوض تو
کانچ کا ایک گلاس نہ ملے
صرف دل پر مان کرتے ہو
اسکا کیا، کب تھم جائے
مجھے اپنا مستقبل
تاریک نہیں کرنا
ڈیلیوں انھا
تے
ساوی دا عاشق

شیئر کریں
راشد جاوید احمد کا تعلق علامہ اقبال ٹاون لاہورسے ہے۔یہ ریٹائرڈ بنک ایگزیکٹو ہیں ۔افسانہ نگار۔ ڈرامہ نگار۔ کاپی رائٹر۔ بلاگر ہیں ، پین سلپس میگزین کے نام سے ہفتہ وار اردو/پنجابی ای میگزین بھی شائع کرتے ہیں ۔

کمنٹ کریں