فاسموفوبیا: جنات کا خوف

جنات ڈرائونا خوف horror phasmophobia

یہ فوبیا کی سب سے کامن شکل ہے فوبیہ مطلب انجانا خوف بلا وجہ کا خوف ۔ یہ خوف آپ کو اکیلے کمرے میں اندھیری جگہ پر زیادہ محسوس ہوتا ہے جن بھوت کا خوف کی وجہ خوفناک کہانیاں پڑھنے فلم دیکھنے یا کوئی ٹیوی شو دیکھنے سے بڑھ جاتا ہے ۔ اکثر لوگوں میں یہ خوف بچپن میں پیدا ہوتا ہے جو آہستہ آہستہ ختم جاتا ہے لیکن کچھ لوگوں میں یہ اپنی جڑیں اس قدر مظبوط کر لیتا ہے کہ اس سے جان چھڑانا ممکن نہیں ہوتا ہے۔ اسے ہم جنات jinnat کا خوف بھی کہتے ہیں۔

آج تک اس خوف کی کوئی خاص وجہ سامنے نہیں آسکی ۔ کچھ لوگوں میں یہ جینیاتی ہوتی ہے انہیں یہ خوف ماں یا باپ سے وراثت میں ملتا ہے یا پھر بچپن یا بڑی عمر میں وہ کسی ایسے حادثے سے گزرتے ہیں جس سے یہ ڈر ان کے لا شعور میں بیٹھ جاتا ہے ۔ جیسے میرا ایک دوست ہے وہ لائٹ آن کیے بنا نہیں سو سکتا اسی ہروقت روشنی چاہیے وہ اس لئے کہ بچپن میں سب کزنز نے اسے ایک اندھیرے کمرے میں بند کر دیا جس سے وہ اتنا ڈرا کہ آج تک اس اندھیرے سے باہر نہیں نکل سکا وہ کہتا ہے آج بھی وہ اس خوف سے باہر ہی نکل سکا۔ عام طور پر اسے بھوت bhootکا خوف بھی کہا جاتا ہے۔

What is Phasmophobia?

Phasmophobia is a psychological disorder by which the patient sees, feels or hears the presence of a zombie or any other horror figure behind himself. It may be a genetic disease or can be caused by wavtching excessive horror movies or reading horror writings e.g. novels and short stories.

Dictionary of Psyche Paras

میرا کزن بھی ایک بار ایسی جگہ سے ڈرا تھا آج بھی اسے ڈرا دو تو بھائی صاحب کو بخار ہو جاتا ہے ۔ اس فوبیہ کے شکار لوگ اکیلے میں بھی کسی نا کسی کی موجودگی محسوس کرتے رہتے ہیں خاص طور رات میں یا اندھیرے میں بعض اوقات انہیں ایسا محسوس ہوتا ہے جیسے وہ مستقل کسی کو نظروں کے حصار میں ہیں کوئی نا دکھنے والی کوئی طاقت ان پر نظر رکھی ہوئی ہے ۔ یا کوئی جن بھوت پریت ان پر حملہ آور ہوجائے گا۔

یہ وہ احساسات ہیں جو اکثر ایسے لوگوں کو محسوس ہوتے ہیں ۔ ایسے لوگ کبھی اکیلے نہیں رہ پاتے خاص کر رات کی وقت ان کا اکیلا ہونے کا یا رہنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا انہیں اپنے آس پاس سائے سے لہراتے نظر آنے لگتے ہیں ۔ رات میں نیند ناآنا، انزائیٹی، رات کے وقت باتھروم تک نہ جا سکنا، اور پینک اٹیک ایک کامن علامات ہیں ایسے لوگوں میں۔

جنات کے خوف کے شکار لوگ بعض اوقات اپنے روز مره کے کام بھی نہیں کر پاتے ایسے لوگوں کو اپنا باقاعدہ علاج کرانا چاہیے ۔ یہ کوئی مذاق یا کمزور چیز نہیں ہے یہ آپ کی جان بھی۔ لے سکتا ہے۔
کچھ معالج تھراپیز کی مدد سے اور کچھ ادویات کی مددسے ایسے لوگوں کا علاج کرتے ہیں۔ ویسے ایک جاننے والے نے مجھے ایک طریقہ بتایا تھا کہ خوف کی وجہ سے اگر نیند نا آرہی ہو تو آنکھیں بند کر کے گہرے گہرے سانس لو ۔ ناک سے سانس اندر منہ سے خارج یہ عمل تین منٹ تک کرنا ہے اس عمل سے خون میں آکسیجن کی مقدار زیادہ ہوگی اور تم اچھا محسوس کرنے لگو گے ۔ دوسرا کمرے کا درجہ حرارت کم رکھو ہلکا ٹھنڈا کمرہ نیند میں آسانی پیدا کرتا ہے اور خوف کو کم یا ختم کرنے کے لیے اس خوف کا سامنا کرو۔

جیسے تمہیں لگتا ہے تمھارے پیچھے کوئی کھڑا ہے تو پیچھے مڑ کر دیکھو اپنے دماغ کو یقین دلاؤ کے بھائی کوئی بھی نہیں ہے ڈر کا سامنا کرو بس۔ باقی نماز روزہ جاری رکھو اللّه سے طاقت ور کوئی نہیں ہے اور اللّه تم سے ہرگز غافل نہیں ہوتا۔

شیئر کریں
مدیر
مصنف: مدیر
لفظ نامہ ڈاٹ کام کی اداریہ ٹیم کے مدیران کی جانب سے

کمنٹ کریں