سمندر کے موضوع پر اشعار

Read Urdu Poetry on the topic of Samandar Par Urdu Shayari (Samundar Kinaray Pe Shayari Status). You can read famous Urdu Poems about Sea Urdu Poetry and Seashore Water Urdu Poetry Sher o Shayari Whatsapp Status. Best and popular Urdu Ghazals and Nazms can be shared with friends. Urdu Tiktok Status Darya Paani Poetry and Facebook Share Urdu Poetry available.

سمندر کے موضوع پر اشعار, سمندر کے موضوع پر اشعار

یہ سمندر ہی اجازت نہیں دیتا ورنہ
میں نے پانی پہ ترے نقش بنا دینے تھے
احسن منیر
۔
آنکھوں میں رہا دل میں اتر کر نہیں دیکھا
کشتی کے مسافر نے سمندر نہیں دیکھا
بشیر بدر
۔
میں استعاروں کی سرزمیں میں اتر کے دیکھوں تو بھید پائوں
بشر مسافر، حیات صحرا، یقین ساحل، گماں سمندر
ازل سے بے سمت جستجو کا سفر ہے درپیش پانیوں کو
کسے خبر کس کو ڈھونڈتا ہے مری طرح رائیگاں سمندر
محسن نقوی
۔
پیاس کہتی ہے کہ اب ریت نچوڑی جائے
اپنے حصے میں سمندر نہیں آنے والا
ذیشان ساجد
۔
جس کو طوفاں سے الجھنے کی ہو عادت محسن
ایسی کشتی کو سمندر بھی دعا دیتا ہے
محسن نقوی

سمندر اشعار

کون کہتا ہے کہ موت آئی تو مر جائوں گا
میں تو دریا ہوں سمندر میں اتر جائوں گا
احمد ندیم قاسمی
۔
سمندر میں اترتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں
تری آنکھوں کو پڑھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں
وصی شاہ
۔
میں نے کچھ پانی بچا رکھا تھا اپنی آںکھ میں
اک سمندر اپنے سوکھے ہونٹ لے کر آ گیا
جلیل عالی
۔
ہم تو سمجھے تھے کہ دو چار ہی آنسو ہوں گے
رونے بیٹھے تو سمندر کے سمندر نکلے
سدرا علی
۔
تم سمندر کی بات کرتے ہو
لوگ آنکھوں میں ڈوب جاتے ہیں
ندیم بھابھہ

سمندر شاعری

میں نے اپنی خشک آنکھوں سے لہو چھلکا دیا
اک سمندر کہہ رہا تھا مجھ کو پانی چاہئے
راحت اندوری
۔
ہائے وہ لوگ جو کہتے تھے سمندر خود کو
جب مِری آنکھ میں ڈوبے تو نشاں تک نہ ملا
نامعلوم
۔
نظروں سے ناپتا ہے سمندر کی وسعتیں
ساحل پہ ایک شخص اکیلا کھڑا ہوا
ںامعلوم

گرتے ہیں سمندر میں بڑے شوق سے دریا
لیکن کسی دریا میں سمندر نہیں گرتا
قتیل شفائی
۔
انہیں ٹھہرے سمندر نے ڈبویا
جنہیں طوفاں کا اندازا بہت تھا
ملک زادہ منظور احمد
۔
بند ہو جاتا ہے کوزے میں کبھی دریا بھی
اور کبھی قطرہ سمندر میں بدل جاتا ہے
فریاد آزر
۔
نظر میں صورت‌ ساحل ابھی نہیں آئی
مرے سفر کا ہر اک مرحلہ سمندر ہے
زاہد فارانی

شیئر کریں
مدیر
مصنف: مدیر
لفظ نامہ ڈاٹ کام کی اداریہ ٹیم کے مدیران کی جانب سے

کمنٹ کریں