شجرکاری / درخت اگائیں — ایک مضمون

درخت

درخت ماحول کے لئے بیحد اہم ہیں۔ درخت کے بغیر زندگی کا تصور نہیں کیا جا سکتا۔ یہ ہمیں سانس لینے کے لئے تازہ ہوا فراہم کرتے ہیں ، پرندوں اور جانوروں کے لئے ایک مضبوط پناہ گاہ ہے۔ یہ ہمیں بہت ساری دواؤں ،جڑی بوٹیوں کے علاوہ لکڑی بھی مہیا کرتے ہیں۔ درخت سے کاغذ بنتا ہے ۔ کپڑے بنتے ہیں۔ یہا تک کہ گوند اور ربر بھی درخت سے ہی حاصل ہوتا ہے ۔ مگر اس قدرتی خزانے کے دشمن ہم خود ہیں ۔ جنگلات کی کٹائی جس تیزی سے کئی دہائیو سے ہو رہی ہے یہ انتہائی تشویش ناک ہے اور اب تو ہماری بقا کا مسئلہ بھی کھڑا ہوا ہے ۔

ہمیں زمین میں پودے لگانے کا عمل منصوبہ بند انداز می شروع کرنا ہوگا ۔ ۔ درخت لگانے کا انحصار جغرافیہ اور خطے کے ٹوپوالوجی پر ہے۔ عام طور پر وہ درخت لگانا چاہئے جو تیزی سے اگتے ہیں جیسے بانس وغیرہ ۔ بہت سے درخت دیسی ہوتے ہیں اور قدرتی ورثہ کو برقرار رکھنے میں مدد گار ہوتے ہیں۔ ہندوستان اور پاکستان میں درخت لگانے کا بہترین موسم مون سون کا موسم ہے جو جون اور ستمبر کے درمیان میں ہوتا ہے۔ جنگلات کی کٹائی سے ہونے والے نقصانات کو پورا کرنے کے لئے درختوں کی شجر کاری سب سے ضروری ہے ۔ تیزی کے جنگل کی کٹائی کے نتائج ہم اب بھگت رہے ہیں۔

درختوں کی کاشت نہ صرف ماحول کے لئے فائدہ مند ہے بلکہ موسمیاتی تبدیلیوں کی بڑھتی ہوئی تشویش ناک صورت حال میں بھی کمی لا سکتا ہے ۔ درخت زمین کے قدرتی مصفا ہیں۔ وہ کاربن ڈائی آکسائیڈ لیتے ہیں اور آکسیجن چھوڑ دیتے ہیں۔ یہ آکسیجن سیارے پر موجود ہر جاندار کے لئے ضروری ہے۔ وہ قدرتی پیوریفائر کہلانے کی وجہ یہ ہے کہ وہ ٹاکسن لے جاتے ہیں اور ہمارے لئے سانس لینے کے لئے پاک و صاف ہوا دیتے ہیں۔ درخت مٹی کے لیے ضروری ہیں کیونکہ وہ کٹاؤ کو روکتے ہیں۔ جب بارش ہوتی ہے اور مٹی درخت کی جڑوں کی وجہ سے کٹتی نہیں ہے ۔ ان کی جڑیں مٹی کو ایک ساتھ باندھے رکھتی ہیں ، اور جڑیں بارش کو زمین کے اندر کی جانب طرف کھیچ لیتی ہے ۔ اس سے درختوں کی شجرکاری بھی ہوتی ہے اور زمین میں ہمارے پینے کا صاف پانی موجود رہتا ہے ۔ ایک اور فائدہ یہ ہے کہ جب پتے زمین پر گرتے ہیں تو وہ مٹی میں گر کر اسے افزودگی بخشتا ہے۔

درختوں کے پودے لگانااور زمین کے سبزے کو برقرار رکھنا ضروری ہے۔ درخت ہمیں پھل اور سبزیاں مہیا کرتے ہیں جو زمین پر موجود تمام جانداروں کو درکار ہے۔ درختوں کے پودے لگانے میں یہ خیال رکھنا چاہئے کہ پرندوں اور بہت سے جانوروں کا مسکن ہے ۔ درخت آب و ہوا میں ہونے والی تبدیلیوں کو کنٹرول کرتے ہیں۔ درخت لگائے بغیر ، زمینیں بیابانوں میں تبدیل ہوجاتی تھیں۔ وہ ٹھنڈا رکھنے اور نمی کو برقرار رکھتے ہوئے درجہ حرارت کو منظم کرتے ہیں۔

درختوں کی شجر کاری بھی معاشی وجوہات کی بناء پر ضروری ہے۔ وہ ہمیں لکڑی ، لکڑی اور ربڑ مہیا کرتے ہیں جو گھروں ، فرنیچر ، کاغذات ، اور مارکیٹ میں فروخت ہونے والی مصنوعات کی تعمیر میں مدد کرتے ہیں۔ درخت سے ہمی پھل ملتا ہے ۔ ہم جوس ، جام اور دیگر کھانے پینے کی اشیاء کے لئے بھی پھلو کا استعمال کرتے ہیں۔ درخت خوبصورت بھی ہیں اور کارمد بھی۔

درخت لگانے کی ضرورت کو پوری دنیا میں تسلیم کیا گیا ہے۔ حکومتیں جنگلات کے تحفظ کے لئے کوشاں ہیں ۔ آج بہت ساری این جی اوز ہیں جو بیداری پھیلانے اور درختوں کے پودے لگانے پہ ہی کام کرتی ہیں۔ ان این جی اوز کی کوشش ہوتی ہے کہ براہ راست پرفارمنس ، بات چیت ، اور سوشل میڈیا کے ذریعہ اپنے پیغامات کو عام کرنے کے ساتھ ساتھ کمیونٹیز کو بھی شریک کیا جاسکے۔ اسکول درخت لگانے کی اہمیت پر بھی زور دیتے ہیں اور استاد طلباء میں درخت کی اہمیت کو سمجھانے کی کوشش کرتے ہیں۔ وہ طلبا کو متعدد فوائد کے بارے می بتاتے ہیں اور اسکول کیمپس میں درختوں کی شجرکاری کرتے ہیں۔ عالمی یوم ماحول پر بہت سے لوگ درخت لگاتے ہیں۔ ہندوستان میں درخت لگانے والے دن کو وان مہوتسو کہا جاتا ہے ، جو ہر سال جولائی کے پہلے ہفتے میں منایا جاتا ہے۔

شیئر کریں
مدیر
مصنف: مدیر
لفظ نامہ ڈاٹ کام کی اداریہ ٹیم کے مدیران کی جانب سے

کمنٹ کریں