سورج پہ اشعار

Read Urdu Poetry on the topic of Sooraj Urdu Shayari (Suraj Pe Sher o Shayari). You can read famous Urdu Poems about Sun Urdu Poetry and Urdu Sher o Shayari Whatsapp Status. Read poetry in Urdu about Sunshine and Sunset. Best and popular Urdu Ghazals and Nazms can be shared with friends. Urdu Tiktok Status Poetry and Facebook Share Urdu Poetry available.

سورج پہ اشعار, سورج پہ اشعار


سورج کی کرن دیکھ کے بیزار ہوئے ہو
شاید کہ ابھی خواب سے بے دار ہوئے ہو
شہزاد احمد

تم پہ سورج کی کرن آئے تو شک کرتا ہوں
چاند دہلیز پہ رک جائے تو شک کرتا ہوں
احمد کمال پروازی

بنے ہیں کتنے چہرے چاند سورج
غزل کے استعاراتی افق پر
مہتاب عالم

ڈوب جاتا ہے دمکتا ہوا سورج لیکن
مہندیاں شام کے ہاتھوں میں رچا دیتا ہے
شہزاد احمد

ممکن ہے کہ صدیوں بھی نظر آئے نہ سورج
اس بار اندھیرا مرے اندر سے اٹھا ہے
آنس معین

سورج کے اجالے میں چراغاں نہیں ممکن
سورج کو بجھا دو کہ زمیں جشن منائے
حمایت علی شاعر

سورج پہ اشعار

جھانکتا بھی نہیں سورج مرے گھر کے اندر
بند بھی کوئی دریچہ نہیں رہنے دیتا
غلام مرتضی راہی

عروج پر ہے عزیزو فساد کا سورج
جبھی تو سوکھتی جاتی ہیں پیار کی جھیلیں
نامی نادری

سارا دن تپتے سورج کی گرمی میں جلتے رہے
ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا پھر چلی سو رہو سو رہو
ناصر کاظمی

یہ سورج کب نکلتا ہے انہیں سے پوچھنا ہوگا
سحر ہونے سے پہلے ہی جو بستر چھوڑ دیتے ہیں
بھارت بھوشن پنت

سورج سے اس کا نام و نسب پوچھتا تھا میں
اترا نہیں ہے رات کا نشہ ابھی تلک
بھارت بھوشن پنت

شب ڈھل گئی اور شہر میں سورج نکل آیا
میں اپنے چراغوں کو بجھاتا نہیں پھر بھی
شہزاد احمد

سورج پہ اشعار

بے ہنر ہاتھ چمکنے لگا سورج کی طرح
آج ہم کس سے ملے آج کسے چھو آئے
شہزاد احمد

چڑھتے سورج کی مدارات سے پہلے اعجازؔ
سوچ لو کتنے چراغ اس نے بجھائے ہوں گے
اعجاز وارثی

یہ حادثہ ہے کہ ناراض ہو گیا سورج
میں رو رہا تھا لپٹ کر خود اپنے سائے سے
غلام محمد قاصر

آگ برسائے خوشی سے کوئی سورج سے کہو
میں کوئی موم نہیں ہوں کہ پگھل جاؤں گا
راشد حامدی

سورج پہ اشعار

وہ کون ہے اسے سورج کہوں کہ رنگ کہوں
کروں گا ذکر تو خوشبو زباں سے آئے گی
شہزاد احمد

رکھ دیتا ہے لا لا کے مقابل نئے سورج
وہ میرے چراغوں سے کہاں بول رہا ہے
وسیم بریلوی

اذن سورج کی کرن کو نہیں جانے کا جہاں
میری تخئیل کا شاہین وہاں بھی پہنچا
ضمیر اترولوی

سورج کو چونچ میں لیے مرغا کھڑا رہا
کھڑکی کے پردے کھینچ دئیے رات ہو گئی
ندا فاضلی

ہو گئی شام ڈھل گیا سورج
دن کو شب میں بدل گیا سورج
اطہر نادر
بہ وقت شام سمندر میں گر گیا سورج
تمام دن کی تھکن سے نڈھال ایسا تھا
اظہر نیر

شیئر کریں
مدیر
مصنف: مدیر
لفظ نامہ ڈاٹ کام کی اداریہ ٹیم کے مدیران کی جانب سے

کمنٹ کریں