مثنوی کی خصوصیات

مولانا جلال الدین رومی کی مثنوی معنوی

مثنوی معنوی مولانا رومی

مولانا جلال الدین رومی (30 ستمبر 1207 ء – 17 دسمبر 1273) تیرہویں صدی کے مسلمان صوفی شاعر ، فقیہ ، عالم دین تھے۔ رومی کا بڑا کام مثنوی معنوی (روحانی جوڑے مث مثنوی معنوی) ہے ، جو چھ جلدوں کی ایک ن...

مثنوی سحرالبیان میر حسن

سحرالبیان کا اسلوب

اسلوب کی بات کی جائے تو سحرالبیان کے اسلوب کی مختلف خصوصیات ہیں جن کا احاطہ کرنا مشکل ہے۔ تاہم اس کی چند خصوصیات مندرجہ ذیل ہیں: زبان شاعری میں زبان کی اہمیت کو جھٹلایا نہیں جا سکتا۔ میر حسن اس نکتے س...

پیار، عشق اور محبت پر منتخب شاعری

مثنوی سحرالبیان میں کردار نگاری

سحرالبیان میں میر حسن کی سیرت نگاری کے بارے میں یہ بات جان لینی چاہئے کہ قصے کے تمام کردار اس آسودہ حال اور فارغ البال معاشرے ے افراد ہیں جہاں دولت عام ہے اور سوائے عشق و عاشقی اور رقص و سرور کی محفلو...

مثنوی سحرالبیان

سحرالبیان میں جذبات و جزئیات نگاری

میر حسن کے ہاں جذبت نگاری کے بڑے ہی اچھے اور موثر مرقعے ملتے ہیں۔ خوشی کے عالم میں خوشی اور غم و الم اور دکھ کے موقع پر رقت طاری ہوجاتی ہے۔ ذرا وہ منظر دیکھیے جب بے نظیر چھت پر سے غائب ہوجاتا ہے۔ محل ...

مثنوی سحرالبیان میر حسن

مثنوی سحرالبیان کی منظر نگاری

مثنوی سحر البیان پر تنقیدی و تحقیقی مضمون کا گزشتہ حصہ سحرالبیان میں تہذیب و ثقافت کی عکاسی مطالعہ کرنے کے لیے کلک کریں۔ میر حسن نے منظر نگاری میں جس دقتِ نظر کا ثبوت دیا ہے وہ ان کی بھرپور فن کاری کی...

مثنوی سحرالبیان لکھنویت masnavi

سحرالبیان میں تہذیب و ثقافت کی عکاسی

یہ مضمون مثنوی سحرالبیان کے گزشتہ مضمون کا اگلا حصہ ہے۔ گزشتہ حصہ پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔ سحرالبیان کی فنی خوبیوں میں اس کی نمایاں کوبی تہذیب و ثقافت کی عکاسی ہے۔ سید عابد علی عابد اس کی تہذیبی و ...

مثنوی سحرالبیان

مثںوی سحرالبیان کی خصوصیات

جب قیامت کا ذکر چھڑ جاتا ہے تو بات محبوب کی جوانی تک پہنچتی ہے۔ جب مثنوی کا ذکر چھڑ جاتا ہے تو بات سحرالبیان تک پہنچتی ہے۔ یہ حقیقیت ہے کہ جس قدر نشہ ، خمار، کشش اور ساحری محبوب کی جوانی میں ہوتی ہے ا...

مثنوی نگاری masnavi

مثنوی کیا ہے؟ مثنوی نگاری کی تعریف

مثنوی کی تعریف مثنوی کا لفظ عربی کے لفظ مثنٰی سے بنا ہے اور مثنیٰ کے معنی دو کے ہیں۔ اصطلاح میں ہیئت کے لحاظ سے ایسی صنفِ سخن اور مسلسل نظؐ کو کہتے ہیں جس کے شعر ممیں دونموں مصرعے ہم قافیہ ہوں اور ہر ...