افسانچے

افسانہ نگار : محمودہ قریشی
آگرہ ۔۔یو۔پی۔انڈیا

, افسانچے

1طمانچہ ۔۔


ارے بھائی صاحب۔۔۔ بیٹیوں کو اتنا پڑھاؤں گے ۔اور تنگ تنگ کپڑے پہننے کی اِجازت دوں گے ۔۔۔تو وہ, سر پر نہیں نانچے گی ,تو پھر کون نانچے گا؟۔۔ ۔۔۔
اب افسوس کرنے سے کیا فائدہ ۔۔جب چڑیا چُگ گئی کھیت ۔۔۔
یہ تمہاری تربیت کا طمانچہ ہی ہے ۔؟ جو آج تمہاری بیٹی نے تمہارے پر منھ پر مارا ہے ۔۔۔
۔بچچیوں کو تو صرف اسکول تک ہی محدود رکھنا چاہئے۔۔۔ کالج والج کے چکر میں نہیں پڑنا چاہیے ۔۔۔جتنا زیادہ ان کو ڈھیل دو وہ اس کا غلط استعمال کرتیں ہیں ۔۔۔ ۔۔۔۔
صد افسوس۔۔۔۔
حکیم صاحب ۔۔۔حیرت انگیز نگاہوں سے دیکھتے ہوئے ۔۔۔۔
مولانا ابرار صاحب۔۔۔۔ آپ ٹھیک ہی کہتے ہو ۔۔۔۔۔۔
“میری تو ناک کٹا دی پوری برادری میں میری بیٹی نے “۔۔۔۔کسی کو منھ دیکھانے کے لائق نہیں چھوڑا مجھے ۔۔۔
میں نے کتنے نازوں سے پالا تھا ۔۔ہر خواہش ,ہر تمنّہ پوری کی اس کی
۔جو کہا, اور جیسا کہا ,وہ سب کیا ۔۔۔
پر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟
ہاں بھائی صاحب ۔۔۔۔آپ نے بس ایک غلطی کر دی ۔۔۔
مجھے دیکھوں میں اپنی بیٹیوں کو اتنی ڈھیل نہیں دیتا ۔۔۔۔۔۔
گھر جا کر کرسی پر بیٹھتے ہوئے ۔۔
بیوی سے ایک گلاس پانی لے کر آؤ ۔۔۔۔
زمانہ بہت خراب ہے ۔۔۔ پہلے بیٹیوں کو اتنا سر پر چڑھا لیتے ہیں ۔اور اب افسوس کر رہے ۔۔۔
بیوی ۔۔۔۔ جھجھکتے ہوئے ۔۔۔
سنئے ۔۔۔۔
ہاں کہوں ۔۔۔۔
وہ بات دراصل یہ ہے ۔۔۔۔۔کیا ہے نہ ۔۔۔۔۔
“حیا ۔۔۔۔۔ابھی تک اسکول سے واپس نہیں آئی ہے ۔۔۔
حیرت سے ۔۔۔۔کیا ۔۔۔۔؟
“تم یہاں ۔۔۔۔آرام سے بیٹھی ہو ۔”؟۔۔
نہیں ۔۔۔نہیں میں اسکول بھی گئی تھی ۔۔۔۔۔
لکین وہاں پتہ چلا کہ حیا آج اسکول ہی نہیں آئی ۔۔۔۔ہے ۔۔۔
اس کی سب ہی سہیلیوں کو کئی مرتبہ فون کر چکی ہو۔۔۔ لکین کسی کو کچھ پتہ نہیں ہے ۔کہ حیا کہاں گئی ہے ۔۔
خدا خیر کرے میری بچچی صحیع سلامت ہو۔۔۔۔۔
تم مجھے اب بتا رہی ہو ۔۔؟
فون نہیں۔۔۔۔۔ کر سکتی تھی ۔؟۔۔
“میں نے آپ کو کئی مرتبہ فون کیا تھا ۔”
۔پر آپ کا فون بند جا رہا تھا ۔۔۔۔
اس لئے آپ کے لوٹنے کا انتظار کر رہی تھی ۔۔۔
ہماری حیا کو میں پچھلے چار پانچ کھنٹوں سے پورے محلّے میں بھی کئی مرتبہ تلاش کر چکی ہوں ۔۔۔۔
اور اس کی سب ہی سہلیوں کو بھی بار بار فون کر رہی ہو۔۔۔۔
لکین کہئی سے بھی کوئی جواب نہیں مل رہا ہے ۔۔۔
پتہ نہیں کہاں گئی ہے یہ لڑکی ۔؟
میرا تو دل بیٹھا جا رہا ہے ۔
۔آپ جلدی سے کچھ کیجئے ۔ ۔۔۔۔۔۔
فون کی گھنٹی بجتی ہے ۔۔۔
ہیلو ۔۔۔۔۔
ہیلو۔۔۔۔۔کون
کیا ,حیا ابرار’ کے والدین بول رہے ہیں ۔۔۔
جی ۔۔۔۔
میں ۔۔۔انسپیکٹر تلوک چند ۔۔۔
حیا کچھ لڑکوں کے ساتھ ایک پارک ۔۔۔سے پکڑی گئی ہے ۔۔
اب ہماری حراست میں ہے ۔۔۔۔۔ ۔


2بوجھ ۔۔


شوہر ۔۔۔کیا ہوا ۔۔۔ اتنا سیڈ سا موڈ کیوں بنا رکھا ہے ۔۔۔
بیوی ۔۔وہ۔۔۔۔ میں ۔۔۔۔۔ میں آج اپنا چیکپ کرانے اسپتال گئی تھی ۔۔۔۔
تو کیا ہوا ۔۔۔۔۔۔؟
شوہر ۔کنفرم ہو گیا نہ بیٹا ہی ہے ۔۔۔۔؟۔۔
بیوی ۔۔ہاں ۔۔۔۔۔نہیں ۔۔۔۔۔
ہاں نہیں مطلب میں نے وہ والا چیکپ نہیں کرایا ہے ۔۔۔
شوہر ۔۔۔کیا پہلیے بجھا رہی ہو ۔۔۔صحیح صحیع بتاؤ کیا بات ہے ۔۔۔
۔۔۔تم جانتی ہو نہ ,,,میں اب پھر سے چوتھی بیٹی کا بوجھہ نہیں اُٹھا سکتا ۔۔
ورنہ تم یہ بوجھ ہی اُتار کے پھیک دو ۔۔۔۔


3..کنواری


۔
ہیلو ۔۔۔۔کون ۔۔
۔میم۔۔۔۔۔۔۔۔ میں ۔۔۔۔۔
کون ۔۔۔میں؟
کس سے بات کرنی ہے آپ کو ۔
میم۔۔۔ آپ سے ہی بات کرنی ہے ۔
سوری رونگ نمبر ۔۔۔۔
دوبارہ ۔۔۔فون کی گھنٹی بجتی ہے ۔۔۔۔
ہیلو ۔۔۔۔دیکھوں اگر تم نے زیادہ پریشان کیا تو تم جانتے نہیں ہو ۔۔۔میں یہ نمبر پولیس میں دےدونگی ابھی فون رکھوں۔۔
میم ۔۔۔”میں آپ کو ہی سننا چاہتا ہو “۔۔۔۔
کٹ۔۔۔۔۔۔۔فون رکھوں ۔۔۔۔
ڈئیر۔۔۔
یہ دیکھوں کافی دیر سے اس نمبر سے مجھے فون کال آرہی ہیں ۔۔!۔۔
“تم دیکھ لینا”
۔۔۔۔
ہیلو ۔۔۔۔کون ۔۔۔
“ابھے سالے تو میری بیوی کو کیوں پریشان کر رہا ہے ۔”۔۔۔
جانتا نہیں ہے۔ تو۔۔۔۔ ہم کون ہیں ۔۔جہاں تو بیٹھا ہے ۔وہی سے اٹھا کر لاؤنگا ۔۔۔اور اتنا ماروگا کہ سب عقل ٹھکانے آجائے گی ۔۔۔
“”اچھا بھائی وہ آپ کی بیوی ہے ۔۔””۔
اچھا ہے۔۔
تھیینک یو۔۔۔ بتانے کے لئے ۔۔۔
میں پکا وعدہ کرتا ہو۔۔۔ اب کبھی فون نہیں کونگا ۔۔۔۔
میں سمجھا تھا وہ کنوای ہے ۔۔اچھا ہوا یار تونے بتا دیا ۔۔۔۔اور اپنا سالا بنا لیا ۔۔۔


4بیٹا نام روشن کرے گا ۔۔۔


ابو کل کالج آجائیے گا ۔۔۔سر آپ سے کچھ بات کرنا چاہتے ہیں ۔
کیا۔۔۔۔۔؟
پھر سے تم نے کسی سے کچھ جھگڑا وگڑا کر لیا ؟ جو سر پھر سے مجھے بلا رہے ہیں ۔۔۔
میں یو روز روز کب تک تمہاری حمایت کرتا رہونگا ۔۔۔
اب کی بار تو تمہارے سر نے کہہ دیا تھا ۔۔۔
” ثاقیب نے پھر سے کوئی نئی حرکت کی تو میں ٹی ۔سی۔ کاٹ کر تمہارے ہاتھ میں دے دونگا “۔۔
نہیں۔۔ ابو وہ بات دراصل یہ ہے کہ ۔
۔کل ہم گرلس کالج میں ایک ایک مقبلے کے لئے گئے تھے ۔جس میں ۔۔۔۔۔۔
کیا ۔۔۔۔کیا۔۔۔ گرلس کالج میں گئے تھے ۔۔۔۔
لو ۔۔۔۔ثاقیب کی امی۔۔۔۔۔, اور سنوں, اب تمہارے صاحب زادے لڑائی جھگڑا چھوڑ کر عشق لڑا رہے ہیں ۔۔۔
اورصاحب زادے ,گرلس۔۔کالج کے چکر بھی کاٹ رہے ہیں ۔۔۔
نہیں ۔۔۔۔نہیں ۔۔۔ابو ہم نے کل گرلس کالج کرکٹ میدان میں۔ دوسرے شہروں سے آئی ہوئی سب ہی ٹیموں کو ہرا کر کرکٹ میچ میں ا وّل پوزیشن حاصل کی ہے ۔
جس میں ہماری ٹیم سلیکٹ ہو کر نیشل کامپٹیشن کے لئے منتخب ہوئی ہے ۔۔۔
دیکھا ۔۔۔آپ نے ۔۔۔
میں نہ کہتی تھی میرا بیٹا ۔۔ ۔نام روشن کرے گا ۔۔۔۔۔۔
۔

شیئر کریں

کمنٹ کریں