ورزش, ورزش کے 10 فائدے

ورزش جسم کی اس حرکت کو کہتے ہیں جس سے آپکے جسمانی غضلات مضبوط ہوں اور آپ کے جسم کیلوری کو جلانے میں مدد کرے ۔ جسمانی ورزش کی کئی قسمیں ہیں ، جن میں تیراکی ، دوڑنا ، ٹہلنا ، چلنا اور ناچنا شامل ہیں۔ ورزش کرنے سے جسمانی اور دماغی طور پر بہت سارے فوائد حاصل ہوتے ہیں۔ یہاں تک کہ آپ کو طویل عرصہ تک زندہ رہنے میں بھی مدد مل سکتی ہے۔ باقاعدہ ورزش کرنےسے آپ کے جسم اور دماغ کو بیحد فائدہ ہوتا ہے

ورزش خوشگواری کا احساس بھی ہے

ورزش سے آپ کا موڈ کو بہتر ہوتا ہے اور افسردگی ، اضطراب اور تناؤ کے احساس میں کمی ہوتی ہے۔ یہ دماغ کے ان حصوں میں پازیٹیو تبدیلیاں پیدا کرتا ہے جو تناؤ اور اضطراب کو کنٹرول کرتے ہیں۔ ورزش ہارمونز سیرٹونن اور نورپائنفرین کے لئے دماغ کی حساسیت کو بھی بڑھا سکتا ہے ، جو افسردگی کے احساسات کو دور کرتا ہے۔ مزید برآں ، ورزش اینڈورفنز کی پیداوار کو بڑھاتی ہے جس سے مثبت جذبات پیدا ہوتے ہیں اور درد کے احساس می بھی کمی ہوتی ہے۔ پریشانی میں مبتلا افراد کو ورزش ضرور کرنی چاہئے اس سے ان کی ذہنی حالت میں تیزی سے بہتری آتی ہے ۔

وزرش سے وزن میں کمی ہوتی ہے

کچھ تحقیقات سے یہ ثابت ہوا ہے کہ وزن میں اضافے اور موٹاپے کی اہم وجہ جسمانی طور پہ فعال نہ ہونا ہے ۔ آپ کے جسم میں تین طرح سے توانائی خرچ ہوتی ہے: کھانا ہضم کرنا ، ورزش کرنا اور جسم کے افعال کو برقرار رکھنا جیسے دل کی دھڑکن اور سانس لینا۔

کھانے سے پرہیز کرنے سے کیلوری کی کم مقدار آپ کے میٹابولک ریٹ کو کم کر دیتی ہے ، جس سے وزن کم ہونے میں تاخیر ہوتی ہے ۔ اس کے برعکس ، باقاعدگی سے ورزش آپ کے میٹابولک کی شرح کو بڑھا تی ہے جس سے زیادہ کیلوری جلتی ہے اور وزن تیزی سے کم ہوتا ہے ۔

پٹھوں اور ہڈیوں کے لیے مفید

ورزش پٹھوں کو مضبوط کرنے اور ہڈیوں کی طاقت برقرار رکھتی ہے ۔اس کی وجہ یہ ہے کہ ورزش ہارمونز کی رہائی میں مدد کرتی ہے جو آپ کے عضلات کی امینو ایسڈ جذب کرنے کی صلاحیت کو بڑھاتا ہے۔ اس سے جسمانی نشوونما میں اضافہ ہوتا ہے اور جسم کی بیماری ، خرابی دور ہوتی ہے۔

جیسے جیسے لوگوں کی عمر بڑھتی ہے ان کے پٹھوں میں کام کرنے کی قوت کم ہو جاتی ہے جس سے معذوری بھی ہو جاتی ہے ۔ جسمانی سرگرمی کی باقاعدگی سے مشق کرنا اس لئے ضرری ہے کہ یہ آپ کی عمر کے ساتھ ہی پٹھوں میں ہونے والے نقصان کو کم کرنے اور طاقت کو برقرار رکھنے میں اہم کردار اداد کرتا ہے۔ ورزش ہڈیوں کی کثافت کو بڑھانے میں مدد کرتی ہے جس سے ہڈیا طویل عمر تک مضبوط رہتی ہیں۔

ورزش سے انرجی میں اضافہ

ورزش ایک حقیقی توانائی کا بوسٹر بھی ہے ۔ایک تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ چھ ہفتوں کے باقاعدگی سے ورزش کرنے سے ان لوگوں میں تھکاوٹ کے احساسات میں کمی ہوئی جو مستقل طور پہ خود کو تھکا ہوا محسوس کرتے تھے ۔ ورزش دائمی تھکاوٹ سنڈروم (سی ایف ایس) اور دیگر سنگین بیماریوں میں مبتلا افراد کے لئے توانائی میں نمایاں اضافہ کرتی ہے۔در حقیقت ، ورزش دیگر علاجوں کی نسبت سی ایف ایس کا مقابلہ کرنے میں زیادہ کارآمد ثابت ہوتی ہے

یہ دائمی بیماری کے خطرات سے بچاتی ہے

دائمی جسمانی سرگرمی کا فقدان بیمار ہونے کا بنیادی سبب ہے ۔ انسولین کی حساسیت ، قلبی فٹنس اور جسمانی تشکیل کو بہتر بنانے کے لیے باقاعدگی سے ورزش کرنی چاہئے اس سے بلڈ پریشر کنٹرول رہتا ہے اور خون کی چربی کی سطح بھی کم ہوتی ہے ۔ اس کے برعکس ورزش کی کمی پیٹ کی چربی میں نمایاں اضافے کا باعث بنتا ہے جس سے ٹائپ 2 ذیابیطس ، دل کی بیماری اور جلد موت کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔ پیٹ کی چربی کو کم کرنے اور ان بیماریوں کے خطرات کو کم کرنے کے لئے روزانہ جسمانی ورزش ضرور کرنی چاہئے۔

جلد کو صحت مند بنانے میں مددگار

عمر کے ساتھ ساتھ آپ کی جلد میں آکسیڈیٹیو تناؤ کی مقدار میں کمی ہوتی ہے ۔ جس سے جلد متاثر ہوتی ہے ۔ آکسیڈیٹو دباؤ اس وقت ہوتا ہے جب جسم کے اینٹی آکسیڈینٹ دفاع مکمل طور پر اس نقصان کی مرمت نہیں کرسکتا ہے جس سے آزاد ریڈیکلز خلیوں کو پہنچتے ہیں۔ اس سے ان کی داخلی ڈھانچے کو نقصان پہنچتا ہے اور آپ کی جلد خراب ہوجاتی ہے۔ باقاعدگی سے اعتدال پسند ورزش آپ کے جسم کی قدرتی اینٹی آکسیڈینٹ کو بڑھاتی ہے ، جو خلیوں کی حفاظت میں مددگار ہے۔ اسی طرح ورزش خون کے بہاؤ کو متحرک رکھتی ہے جس سے جلد لمبی عمر تک چمکدار اور خوبصورت دکھائی دیتی ہے ۔

دماغی صحت اور یاداشت میں بہتری

ورزش سےدماغ کے فنکشن میں بہتری آتی ہےیہ میموری کو مضبوط بناتا ہے اور سوچنے کی مہارت میں اضافہ کرتا ہے۔ورزش آپ کے دماغ میں خون اور آکسیجن کے بہاؤ میں بہتری لاتا ہے۔یہ ہارمون کو بھی متحرک رکھتا ہے جو دماغی خلیوں کی نشوونما کو بڑھاتا ہے۔

عمر بڑھنے کے بعد سے بالغوں میں باقاعدگی سے جسمانی سرگرمی خاص طور پر اہم ہے۔ آکسائڈیٹیو تناؤ اور سوزش کے ساتھ مل کر دماغ کی ساخت اور افعال میں تبدیلیوں کو فروغ دیتی ہے۔ ہپپوکیمپس دماغ کا ایک ایسا حصہ ہے جو میموری اور سیکھنے کے لئے ضروری ہے اس میں ورزش سے بہتری آتی ہے۔

نیند اور اطمینان میں بہتری

ورزش کی باقاعدی آپ کو آرام اور بہتر نیند لینے میں مدد دے سکتی ہے۔ ورزش کے دوران حاصل ہونے والی توانائی نیند کی کمی کو دور کرتی ہے ۔ ورزش کے دوران جسم کے درجہ حرارت میں اضافہ ہوتا ہے جس سے ہری اور پرسکون نیند آتی ہے ۔

ایک تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ ہر ہفتے 150 منٹ کی اعتدال کے ساتھ کی گئی ورزش سے بھرپور اور گہری نیند آتی ہے ۔ایک اور تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ 16 ہفتوں کی جسمانی سرگرمی سے نیند کے معیار میں کئی گنا اضافہ ہوا اور بے خوابی والے 17 افراد کو گہری نیند سونے میں مدد ملی ہے۔ باقاعدگی سے ورزش بزرگوں کے لئے بھی فائدہ مند ہے ۔

درد می کمی

روزانہ ورزش کرنے سے دائمی درد سے نجات بھی ملتی ہے ۔ گھٹنو کے درد ، پٹھو کے درد ، کمر اور کاندھے وغیرہ کے درد می ورزش ضرور کرنی چاہئے ۔ اب تو ڈاکٹر بھی ورزش کرنے پہ زور دیتے ہی اور یہ دیکھا گیا ہے ورزش کے سو فیصد مثبت نتائج ملتے ہیں۔

بہترین جنسی زندگی

باقاعدگی سے کی گئی ورزش پکے دماگ کو پرسکون رکھتی ہے اور ساتھ ہی جسم بھی صحت مند رہتا ہے ۔ یہ قلب کو بہتر بناتا ہے ۔ خون کی گردش کو درست رکھتا ہے ۔ پٹھوں کو بہتر بنا کر ان کی لچک کو برورار رکھتا ہے ۔ اس وجہ سے پکی جنسی زندگی پہ بھی خوشگوار اثر پڑتا ہے اور پکی جنسی زندی بھی پہلے سے بہتر ہوتی ہے ۔

لبِ لباب

ورزش ناقابل یقین حد تک آپکی صحت کو بہتر بناتا ہے اورآپکے جسم کو بہتر سے بہتر بناتا ہے ۔ جسمانی بیماریو کو دور کرتا ہے جس کے مثبت نتائج آپکی زندگی پہ اثر انداز ہوتے ہیں

چاہے آپ کسی خاص کھیل کی مشق کریں یا ہر ہفتے 150 منٹ کی سرگرمی کے رہنما اصول پر عمل کریں آپ لامحالہ کئی طریقوں سے اپنی صحت کو بہتر بناسکتے ہیں۔

شیئر کریں
مدیر
مصنف: مدیر
لفظ نامہ ڈاٹ کام کی اداریہ ٹیم کے مدیران کی جانب سے

کمنٹ کریں