پاکستان میں یوم آزادی

, پاکستان میں یوم آزادی

پاکستان میں یوم آزادی یا یوم استقلال ہر سال چودہ اگست کو منایا جاتا ہے۔ یہ وہ مبارک دن ہے جب ملک پاکستان 1947ء میں انگلستان کی غلامی سے آزاد ہو کر معرض وجود میں آیا۔ پاکستان میں چودہ اگست کا دن سرکاری سطح پر قومی تہوار کی شکل میں بہت دھوم دھام سے منایا جاتا ہے ۔ تمام پاکستانی عوام اس روز اپنا قومی سبز پرچم فضا میں بلند کرتے ہوئے اپنے قومی محسنوں کو خراج تحسین پیش کرتی ہے جن کی قربانیوں کی وجہ سے آزادی نصیب ہوئی ۔ اس شام ملک بھر کی تمام اہم سرکاری عمارات کو چراغاں کیا جاتا ہے ۔ پاکستان لا دارالحکومت اسلام آباد ہے اسے بطور خاص سجایا جاتا ہے ۔ اسلام آباد کے مناظر کسی جشن کا سماں پیدا کر رہے ہوتے ہیں۔ اسلام آباد میں ایک قومی حیثیت کی حامل بڑی تقریب میں صدر پاکستان اور وزیرآعظم اپنا قومی پرچم بلند کرتے ہوئے اس بات کا عہد نو کرتے ہیں کہ ہم اس پرچم کی مانند اس وطن عزیز کو بھی عروج و ترقی کی بلندیوں تک پہنچائیں گے۔ نہ صرف صدارتی اور پارلیمانی عمارات پر قومی پرچم لہرایا جاتا ہے بلکہ ان تقاریب کے علاوہ پورے ملک میں سرکاری اور نیم سرکاری عمارات پر بھی سبز ہلالی پرچم پوری آب و تا ب کے ساتھ لہراتا ہے اور اپنی بلندی کا نظارہ پیش کرتا ہے۔ چودہ اگست یعنی یوم اسقلال کے روز ریڈیو، ٹیلی ویژن اور انٹرنیٹ پہ براہ راست صدر اور وزیراعظم پاکستان کی تقاریر کو نشر کیا جاتا ہے اور اس عہد اس قسم کی تجدید کی جاتی ہے کہ ہم سب مل کراپنے وطن عزیز کو ترقی، خوشحالی اور کامیابیوں کی بلند سطح پہ لے جائیں گے ۔

یوم آزادی سرکاری طور پہ انتہائی شاندار طریقے سے مناتے ہوئے تمام اعلیٰ عہدہ دار اپنی حکومت کی کامیابیوں اور بہترین حکومتی حکمت عملیوں کا تذکرہ کرتے ہوئے پاکستانی عوام سے یہ عہد کرتے ہیں کہ ہم اپنی جان کی بازی لگا کر بھی اس وطن عزیز کو ترقی کی راہ پر یونہی گامزن رکھیں گے اور ہمیشہ اپنے رہنما اپنے قائد اعظم محمد علی جناح کے قول “ایمان، اتحاد اور تنظیم” کی مکمل پاسداری کریں گے۔

چودہ اگست کو پاکستان کے تمام اداروں میں سرکاری تعطیل ہوتی ہے ۔ تمام صوبوں کے مرکزی مقامات پر تقاریب کا انعقاد کیا جاتا ہے اور ساتھ ہی ساتھ ثقافتی پروگرامز کا بھی اہتمام ہوتا ہے۔ پاکستان کے تمام شہروں کے ناظم قومی پرچم بلند کرتے ہیں۔ نجی اداروں کے سربراہان بھی کثیر تعداد میں پرچم کشائی کی تقاریب میں موجود ہوتے ہیں۔ ملک بھر کے تمام اسکولوں اور کالجوں میں بھی پرچم کشائی کی جاتی ہے ۔ اساتذہ اور طلباء موجود ہوتے ہیں اور اس کے ساتھ ساتھ رنگارنگ تقاریب، تقاریر اور مذاکروں کا خاص اہتمام بھی کیا جاتا ہے۔ اس دن بچوں، جوانوں اور بوڑھوں کا جوش و خروش توقابل دید ہوتا ہے ۔ کئی جگہوں پہ مختلف تقاریب کے علاوہ دوپہر اور رات کے کھانے کا بھی خاص اہتمام کیا جاتا ہے اور بعد ازاں سرکاری تعطیل کا فائدہ اٹھا کر سیروتفریح سے بھی لطف اندوز ہوا جاتا ہے۔ رہائشی علاقوں، ثقافتی اداروں اور معاشرتی انجمنوں کے زیر راہتمام تفریحی پروگرام تو انتہائی شاندار طریقے سے منائے جاتے ہیں۔ مقبرہء قائد اعظم پر سرکاری طور پر گارڈ کی تبدیلی کی تقریب کا انعقاد ہوتا ہے۔ اسی طرح واہگہ باڈر پر بھی ثقافتی تقاریب میں احترامی محافظوں کی تبدیلی کا عمل وقوع پزیر ہوتا ہے جبکہ غلطی سے واہگہ سرحد پار کرنے والے قیدیوں کی دوطرفہ رہائی بھی ہوتی ہے۔

شیئر کریں
مدیر
مصنف: مدیر
لفظ نامہ ڈاٹ کام کی اداریہ ٹیم کے مدیران کی جانب سے

کمنٹ کریں